مسجد کے زیر سایہ خرابات چاہیے

مسجد کے زیر سایہ خرابات چاہیے
مسجد کے زیر سایہ خرابات چاہیے

  

مسجد کے زیر سایہ خرابات چاہیے

بھوں پاس آنکھ قبلۂ حاجات چاہیے

عاشق ہوے ہیں آپ بھی ایک اور شخص پر

آخر ستم کی کچھ تو مکافات چاہیے

دے داد اے فلک دل حسرت پرست کی

ہاں کچھ نہ کچھ تلافی مافات چاہیے

سیکھے ہیں مہ رخوں کے لیے ہم مصوری

تقریب کچھ تو بہر ملاقات چاہیے

مے سے غرض نشاط ہے کس رو سیاہ کو

اک گونہ بے خودی مجھے دن رات چاہیے

نشو و نما ہے اصل سے غالبؔ فروع کو

خاموشی ہی سے نکلے ہے جو بات چاہیے

ہے رنگ لالہ و گل و نسریں جدا جدا

ہر رنگ میں بہار کا اثبات چاہیے

سر پائے خم پہ چاہیے ہنگامِ بے خودی

رو سوئے قبلہ وقتِ مناجات چاہیے

یعنی بہ حسب گردش پیمانۂ صفات

عارف ہمیشہ مستِ مے ذات چاہیے

شاعر: مرزا غالب

Masjid K Zer e Saaya Kharabaat Chaahiay

Bhaon Pas Aankh Qibla e Manajaat Chaahiay

Aashiq Huay Hen Aap Bhi Ik  Aor Shakhs Par

Aakhir Sitam Ki Kuch To Muqafaat Chaahiay

Day Daad, Ay Falak Dil e Hasrat Parast Ko

Haan Kuch Na Kuch Talaafi e Mafaat Chaahiay

Seekhay Hen Mah Rukhon K LIay Ham Musavvri

Taqreeb Kuch To Behr e Mulaqaat Chaahiay

May Say Gharaz Mishaat Hay Kiss Rusayaah Ko

Ik Goona Bekhudi Mujahy Din Raat Chaahiay

Nashv op NumaHayAsl Say GHALIB Farogh Ko

Khamoshi Hi Say Niklay Hay Jo Baat Chaahiay

Hay Rang e Laala o Gull o Nasreen Juda Juda

Har Rang Men Bahaar Ka Isbaat Chaahiay

Sar Paa e Khum Pe Chahiay hangaam e Bekhudi

Ru Soo e Qibla o Waqt e Manajaat Chaahiay

Yaani Ba Hasb e Gardish e Paimaana e Sifaat

ARIF, Hamesha Mast e May Zaat Chaahiay

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -