بساطِ عجز میں تھا ایک دل یک قطرہ خوں وہ بھی

بساطِ عجز میں تھا ایک دل یک قطرہ خوں وہ بھی
بساطِ عجز میں تھا ایک دل یک قطرہ خوں وہ بھی

  

بساطِ عجز میں تھا ایک دل یک قطرہ خوں وہ بھی

سو رہتا ہے بہ اندازِ چکیدن سر نگوں وہ بھی

رہے اس شوخ سے آزردہ ہم چندے تکلف سے

تکلف بر طرف، تھا ایک اندازِ جنوں وہ بھی

خیالِ مرگ کب تسکیں دلِ آزردہ کو بخشے

مرے دامِ تمنا میں ہے اک صیدِ زبوں وہ بھی

نہ کرتا کاش نالہ مجھ کو کیا معلوم تھا ہمدم

کہ ہوگا باعثِ افزائشِ دردِ دروں وہ بھی

نہ اتنا بُرّشِ تیغِ جفا پر ناز فرماؤ

مرے دریاۓ بے تابی میں ہے اک موجِ خوں وہ بھی

مےِ عشرت کی خواہش ساقیِ گردوں سے کیا کیجے

لیے بیٹھا ہے اک دو چار جامِ واژگوں وہ بھی

مرے دل میں ہے غالبؔ شوقِ وصل و شکوۂ ہجراں

خدا وہ دن کرے جو اس سے میں یہ بھی کہوں، وہ بھی

شاعر: مرزا غالب

Basaat e Ejz MenTha Ik Dil Yak Qatra e Khoon Wo Bhi

So Rehta hay BaAndaaz e Cheekdan Sar NagoonWo Bhi

Rahay Uss Shokh Say  Aazurda Ham Chanday Takalluf Say

Takalluf  Bartaraff  Tha Aik Andaaz e Junoon Wo Bhi

Khayal e Marg Kab Taskeen Dil e Aarzu Ko Bakhshay

Miray Daam e Tamanna Men Hay Ik Said e Zaboon Wo Bhi

Na Karta Kaash Naala Mujh Ko Kaya Maloom Tha  Hamdam

Keh Ho Ga Baais e  Afzaaish e Dard e Duroon Wo Bhi

Na  Itna  Burrish e  Taigh Jafa Par Naaz Farmaao

Miray Darya e Betaabi Men HAy Ik Moj e Khoon  Wo Bhi

May Eshrat Ki Khahish Saaqi e Gardun Say Kaya Kijay

Liay Baitha Hay Ik , Do ,Chaar Jaam e Wazzgoon Wo Bhi

Miray Dil Men Hay GHALIB Shoq e Wasl e Shikwa e Hijraan

Khuda Wo Din Karay Jo Uss Say Main Yeh  Bhi Kahun, Wo Bhi

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -