ہے بزمِ بتاں میں سخن آزردہ لبوں سے

ہے بزمِ بتاں میں سخن آزردہ لبوں سے
ہے بزمِ بتاں میں سخن آزردہ لبوں سے

  

ہے بزمِ بتاں میں سخن آزردہ لبوں سے

تنگ آئے ہیں ہم ایسے خوشامد طلبوں سے

ہے دورِ قدح وجہِ پریشانیِ صہبا

یک بار لگا دو خمِ مے میرے لبوں سے

رندانِ درِ مے کدہ گستاخ ہیں زاہد

زنہار نہ ہونا طرف، ان بے ادبوں سے

بیدادِ وفا دیکھ کہ جاتی رہی آخر

ہر چند مری جان کو تھا ربط لبوں سے

شاعر: مرزا غالب

hay Bazm e Naaz Men Sukhan Aazurda Labon Say

Tang Aaey Hen Ham Aisay Khoshamad Talabon Say

Hay Dor e Qadah Wajh e Pareshaani e Sabaa

Yak Baar Laga Do Khum e May Meray Labon Say

Zindaan e Dar e maykadaa Gutaakh Hen Zahid

Zunhaar Na Hona Taraf Un Be Adabon Say

Bedaad e Wafa Dekh Keh Jaati Rahi Aakhir

Har Chand Miri Jaan Ko  Tha Rabt Labon Say

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -