غمِ دنیا سے گر پائی بھی فرصت سر اٹھانے کی

غمِ دنیا سے گر پائی بھی فرصت سر اٹھانے کی
غمِ دنیا سے گر پائی بھی فرصت سر اٹھانے کی

  

غمِ دنیا سے گر پائی بھی فرصت سر اٹھانے کی

فلک کا دیکھنا تقریب تیرے یاد آنے کی

کھلے گا کس طرح مضموں مرے مکتوب کا یا رب

قسم کھائی ہے اس کافر نے کاغذ کے جلانے کی

لپٹنا پرنیاں میں شعلۂ آتش کا آساں ہے

ولے مشکل ہے حکمت دل میں سوزِ غم چھپانے کی

انہیں منظور اپنے زخمیوں کو  دیکھ آنا تھا

اٹھے تھے سیرِ گل کو، دیکھنا شوخی بہانے کی

ہماری سادگی تھی التفاتِ ناز پر مرنا

ترا آنا نہ تھا ظالم مگر تمہید جانے کی

لکد کوبِ حوادث کا تحمل کر نہیں سکتی

مری طاقت کہ ضامن تھی بتوں کے ناز اٹھانے کی

کہوں کیا خوبیِ اوضاعِ ابنائے زماں غالبؔ

بدی کی اس نے جس سے ہم نے کی تھی بارہا نیکی

Gham e Dunya Say Agar Paai Bhi Frusat Sar Uthaanay Ki

FalakKa Dekhna Taqreeb Teray Yaad Aanay Ki

Khulay Ga Kiss Tarah  Mazmoon Miray  Maktoob Ka Ya RAB

Qasam Khaai Hay Uss Kaafir Nay Kaghaz K Jalaanay Ki

Lipatna Parniaan   Men Shola e Aatish Ka Aasaan Hay

Walay Mushkil  Hay Hikmat Dil Men Soz  e Gham Chhupaanay Ki

Unhen Manzoor Apnay  Zakhmion Ko Dekh Aana Tha

Uthay Thay Ser e Gull Ko Dekhna Shokhi Bahaanay Ki

Hamari Sadgi Thi Ilifaat e Naaz Par Marna

Tira Aana Na Tha Zaalim Magar Tamheed Jaanay Ki

Lakad Kob e  Hawaadis Ka  Tahammul Kar Nahen Sakti

Miri Taaqat Keh Zaamin Thi Buton K Naaz Uthaanay Ki

Kahun Kaya Khoob Aozaa e Abnaa e Zamaan GHALIB

Badi Ki Uss Nay Jiss SayHam Nay Ki Thi Baarha Naiki

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -