کیا تنگ ہم ستم زدگاں کا جہان ہے

کیا تنگ ہم ستم زدگاں کا جہان ہے
کیا تنگ ہم ستم زدگاں کا جہان ہے

  

کیا تنگ ہم ستم زدگاں کا جہان ہے

جس میں کہ ایک بیضۂ مور آسمان ہے

ہے کائنات کو حَرَکت تیرے ذوق سے

پرتو سے آفتاب کے ذرّے میں جان ہے

حالانکہ ہے یہ سیلیِ خارا سے لالہ رنگ

غافل کو میرے شیشے پہ مے کا گمان ہے

کی اس نے گرم سینۂ اہلِ ہوس میں جا

آوے نہ کیوں پسند کہ ٹھنڈا مکان ہے

کیا خوب! تم نے غیر کو بوسہ نہیں دیا

بس چپ رہو ہمارے بھی منہ میں زبان ہے

بیٹھا ہے جو کہ سایۂ دیوارِ یار میں

فرماں روائے کشورِ ہندوستان ہے

ہستی کا اعتبار بھی غم نے مٹا دیا

کس سے کہوں کہ داغ جگر کا نشان ہے

ہے بارے اعتمادِ وفاداری اس قدر

غالب ہم اس میں خوش ہیں کہ نا مہربان ہے

شاعر:مرزا غالب

Kaya Tang Ham Sitam Zadgaan Ka Bayaan Hay

Jiss Men Keh Aik Baiza e Mor Aasmaan Hay

Hay Qainaat Ko Harkar Teray Zoq Say

Partao Say Aaftaab K Zarray Men Jaan Hay

Halaankeh Hay yeh Seeli Kahar Isay Laala Rang

Ghaafil Ko Meray Sheeshay Pe May Ka Gumaan Hay

Ki Uss Nay Garm Seena e Ehle hawas Men Ja

Aaway Na Kiun Pasand Keh Thanda Makaan Hay

Kaya Khoob , Tum Nay Ghair Ko Bosa Nahen Dia

Bass Chup Raho Hamaaray Bhi Munh Men Zubaan Hay

Baitha Hay Jo Keh Saaya e Dewaar e Yaar Men

Farmaan Rawa e  Kishwar e Hindustaan Hay

Hasti  Ka Aitbaar Bhi Gham Nay Mita Dia

Kiss Say Kahun Keh Daag Jigar  Ka Nishaan Hay

Hay Baar e Aitmaad o Wafadaari Iss Qadar

GHALIB Ham Iss Men Khush Hen Keh Na Mehrbaan Hay

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -