گر خامشی سے فائدہ اخفائے حال ہے

گر خامشی سے فائدہ اخفائے حال ہے
گر خامشی سے فائدہ اخفائے حال ہے

  

گر خامشی سے فائدہ اخفائے حال ہے

خوش ہوں کہ میری بات سمجھنی محال ہے

کس کو سناؤں حسرتِ اظہار کا گلہ

دل فردِ جمع و خرچِ زباں ہائے لال ہے

کس پردے میں ہے آئینہ پرداز اے خدا

رحمت کہ عذر خواہ لبِ بے سوال ہے

ہے ہے خدا نہ خواستہ وہ اور دشمنی

اے شوقِ منفعل! یہ تجھے کیا خیال ہے

مشکیں لباسِ کعبہ علی کے قدم سے جان

نافِ زمین ہے نہ کہ نافِ غزال ہے

وحشت پہ میری عرصۂ آفاق تنگ تھا

دریا زمین کو عرقِ انفعال ہے

ہستی کے مت فریب میں آ جائیو اسدؔ

عالم تمام حلقۂ دامِ خیال ہے

شاعر: مرزا غالب

Gar Khhmsho Say Faaida Ikhfaa e Haal Hay

Khush Hun Keh Meri Baat Samjahni Muhaal Hay

Kiss Ko Sunaaun Hasrat e Izhaar Ka Gila

Dil Fard e Jamaa o Kharch Zubaan e Haal Laal Hay

Kiss Parday Men Hay Aaina Pardaaz Ay KHUDA

Rehmat Keh Uzr Khaah e Lab e Be Sawaal Hay

Hay Hay Khudanakhaasta Wo Aor Dushmani

Ay Shoq e Munfaaill , Yeh Tujhay Kaya Khayaal Hay

Mushkeen Libaas e KAABA , ALI  K Qadam Say Jaan

Naaf e Zameen Hay Yeh Na Keh Naaf e Ghazaal Hay

Wehshat Pe Meri Arsa  e Afaaq Tang Tha

Darya Zameen  Ko Arq e Anfaaal Hay

Hasti K Mat Faraib Aa Jaaio ASAD

Aalam Tamaam Halqa e Daam e Khayaal Hay

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -