چیف جسٹس لاہورہائیکورٹ نے سمندر پارپاکستانیوں کو بڑی خوشخبری سنا دی 

چیف جسٹس لاہورہائیکورٹ نے سمندر پارپاکستانیوں کو بڑی خوشخبری سنا دی 
چیف جسٹس لاہورہائیکورٹ نے سمندر پارپاکستانیوں کو بڑی خوشخبری سنا دی 

  

لاہور(ڈیلی پاکستان آن لائن) چیف جسٹس لاہور ہائی کورٹ سردار محمد قاسم خان نے کہا ہے کہ سمندر پار پاکستانیوں کے مقدمات سماعت کرنے والے جج صاحبان غیر ضروری التوا سے پرہیز کریں،تارکینِ وطن  ملک کیلئے ریڑھ کی ہڈی کی حیثیت رکھتے ہیں، اوورسیز پاکستانیوں کے مقدمات کو بھی جلد نمٹانے کے حوالے سے ہدایات جاری کر دی گئی ہیں۔

نجی ٹی وی "ایکسپریس  نیوز" کے مطابق تقریب سے خطاب کرتے ہوئے  چیف جسٹس لاہور ہائی کورٹ سردار محمد قاسم خان نے کہا کہ  جو ججز اوورسیز پاکستانیز کے مقدمات سن رہے ہیں وہ ان کے غیر ضروری التوا سے پرہیز کریں، تارکینِ وطن کی جانب سے حاصل ہونے والا زرمبادلہ ہمارے ملک کیلئے ریڑھ کی ہڈی کی حیثیت رکھتا ہے،تمام ادارے تارکینِ وطن کو درپیش مسائل کے حل کے لئے خصوصی اقدامات کریں، اوورسیز پاکستانیوں کے مقدمات کو بھی جلد نمٹانے کے حوالے سے ہدایات جاری کر دی گئی ہیں۔انہوں نے کہا کہ پاکستان میں سرمایہ کاری وقت کا اہم تقاضا ہے، ہمیں آگے بڑھنا ہے اور پہلے سے بنے قوانین کے نفاذ کو یقینی بنانا ہے،پاکستان میں کاروباری طبقے کیلئے بہت زیادہ مواقع موجود ہیں،  بطور چیف جسٹس عہدہ سنبھالا تو کاروباری طبقے کی مشکلات کا علم تھا، کورونا کی وجہ سے وقت پر کمرشل عدالتوں کے قیام کیلئے زیادہ اقدامات نہ کرسکے،کورونا وبا کے کم ہوتے ہی ہم نے سب سے پہلے اپنے ویژن کو عملی جامہ پہنانے کے لیے اقدامات کئے.انہوں نے کہا کہ  کمرشل مقدمات کے لئے ماڈل کورٹس کے روڈ میپ کے پہلے مرحلے میں پانچ اضلاع میں خصوص عدالتیں قائم کی گئی ہیں،اگرچہ کراچی ہماری تجارت کا مرکز ہے لیکن پنجاب کے پانچ اضلاع میں پہلی ماڈل کمرشل کورٹ کے قیام سے پنجاب کو سبقت حاصل ہوئی ہے. 

مزید :

علاقائی -پنجاب -لاہور -