قومی ٹیم کی کارکردگی میں عدم تسلسل پر پی سی بی حکام پریشان، مصباح الحق کرکٹ کمیٹی کے سامنے ’پیشی‘ میں کیا کچھ بتائیں گے؟ تفصیلات سامنے آ گئیں

قومی ٹیم کی کارکردگی میں عدم تسلسل پر پی سی بی حکام پریشان، مصباح الحق کرکٹ ...
قومی ٹیم کی کارکردگی میں عدم تسلسل پر پی سی بی حکام پریشان، مصباح الحق کرکٹ کمیٹی کے سامنے ’پیشی‘ میں کیا کچھ بتائیں گے؟ تفصیلات سامنے آ گئیں

  

لاہور (ڈیلی پاکستان آن لائن) قومی ٹیم کی کارکردگی میں تسلسل کا فقدان پاکستان کرکٹ بورڈ (پی سی بی) کو پریشان کرنے لگا، قومی ٹیم کے ہیڈ کوچ و چیف سلیکٹر مصباح الحق کرکٹ کمیٹی کے سامنے پیش ہوکر اپنی اور ٹیم کی کارکردگی پر سوالات کا سامنا کریں گے جبکہ مستقبل کے حوالے سے لائحہ عمل بھی بتانا ہو گا۔ 

تفصیلات کے مطابق مصباح الحق گزشتہ سال 4 ستمبر کو ہیڈ کوچ اور چیف سلیکٹر مقرر ہوئے تھے جبکہ وقار یونس کو باﺅلنگ کوچ کی ذمہ داری سونپی گئی۔ بعد ازاں مرحلہ وار مزید معاون سٹاف کی خدمات بھی حاصل کی گئیں لیکن گزشتہ 12ماہ میں قومی ٹیم کی کارکردگی میں تسلسل کا فقدان رہا اور زیادہ تر فتوحات کمزور ٹیموں کیخلاف ملیں، پاکستان نے آسٹریلیا میں دونوں میچز میں شکست کے ساتھ آغاز کرتے ہوئے حالیہ دورہ انگلینڈ سمیت بیرون ملک 3ٹیسٹ میچز میں مات کھائی، دونوں کامیابیاں ہوم گراﺅنڈز پر سری لنکا اور بنگلہ دیش کیخلاف حاصل کیں، تینوں ون ڈے اپنے میدانوں پر کمزور سری لنکاکیخلاف ہوئے اور ان میں سے2میں فتح پائی جبکہ ایک میچ بارش کی نذر ہو گیا۔ 

قومی ٹیم نے اس عرصے کے دوران 12 ٹی 20 میچز میں سے صرف 3جیتے جبکہ اتنے ہی مقابلے موسم کی خرابی کے باعث بے نتیجہ رہے، پاکستان ٹیم ٹیسٹ کرکٹ میں ساتویں، ون ڈے میں چھٹے نمبر پر ہے جبکہ ٹی 20 فارمیٹ میں کافی عرصہ راج کرنے کے بعد پہلی پوزیشن سے پھسل کر چوتھی پر آ چکی ہے، گرین شرٹس انگلینڈ میں سیریز کا آخری میچ بھی ہار جاتے تو پانچویں نمبر پر جانا پڑتا تاہم اس میچ میں فتح مقدر بنی اور یوں آئی سی سی رینکنگ میں چوتھی پوزیشن بھی بچ گئی لیکن کارکردگی میں تسلسل نہ ہونے پر پی سی بی حکام پریشان ہیں کیونکہ بھاری بھر کم کوچنگ سٹاف ابھی تک مطلوبہ نتائج نہیں دے سکا۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ آئندہ چند ہفتوں میں ہیڈ کوچ و چیف سلیکٹر مصباح الحق کرکٹ کمیٹی کے سامنے پیش ہوکر اپنی اور ٹیم کی کارکردگی پر سوالات کا سامنا کریں گے،کمیٹی کا اجلاس رواں ماہ کے آخر میں شیڈول کیا گیا تھا لیکن اقبال قاسم کی جانب سے استعفیٰ دئیے جانے کے بعد نئے چیئرمین کا تقرر ہونا ہے اور پی سی بی نے یہ فیصلہ جلد کرنے کا اعلان بھی کیا ہے۔ 

یاد رہے کہ قبل ازیں چیئرمین پی سی بی احسان مانی کہتے رہے کہ ایک سال بعد مصباح الحق کی کارکردگی کا جائزہ لیں گے،ایک حالیہ انٹرویو میں بھی انہوں نے کہا تھا کہ ٹیم اور کھلاڑیوں کی پرفارمنس میں تسلسل لانے کیلئے ایک ایسی پروفیشنل مینجمنٹ ٹیم کا انتخاب کیا جس کے جدید کرکٹ کے بارے میں علم اور تجربے کا کوئی نعم البدل نہیں، سب جانتے ہیں کہ انٹرنیشنل سطح پر تسلسل کے ساتھ اچھا پرفارم کرنے کیلئے کیا اقدامات اٹھانا ضروری ہیں۔

مزید :

کھیل -