مچھروں کی بھرمار، کرونا کے بعد ڈینگی اور ملیر یا پھیلنے کا خدشہ

مچھروں کی بھرمار، کرونا کے بعد ڈینگی اور ملیر یا پھیلنے کا خدشہ

  

لاہور (جاویداقبال) شہر میں کرونا وائرس سے قبل ڈینگی اور ملیریا بخار کا باعث بنے والے مچھر موجود ہیں جس کو تلف کرنے کے لئے تا حال ضلعی انتظامیہ اور حکومت خاموش ہے ان مچھروں کو بروقت تلف نہ کیا گیا تو خدشہ ہے کہ شہر میں ایک نئی مصیبت کھڑی ہو سکتی ہے۔ تفصیلات کے مطابق شہر میں ڈینگی اور ملیریا کا باعث بننے والے مچھر موجود ہیں اور کرو نا کی وبا بھی پھیلی ہوئی ہے ایسے میں مچھروں کی بہتات کسی خطرے سے خالی نہیں ہے اس پر ستم ظریفی یہ ہے کہ ڈسٹرکٹ انتظامیہ نے اس پر آنکھیں بند کر لی ہیں ضلعی انتظامیہ اور ایڈمنسٹریٹر لاہور کے علم میں ہے کہ شہر میں مچھروں کی یلغار ہے مگر تاحال سپرے شروع نہیں کیا جاسکا۔ بتایا گیا ہے کہ بعض اداروں نے حکومت کو رپورٹ دی ہے کہ شہر میں ملیریا اور ڈینگی کا باعث بننے والے مچھر موجود ہیں جنہیں تلف کرنے کے لئے تاحال میٹروپولیٹن کارپوریشن اور شہر کے 9 زون خاموش ہیں۔ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ شالیمار، عزیزبھٹی، واہگہ،نشتر، راوی اور داتا گنج بخش زون کے علاقوں میں مچھروں کی نرسریاں ہیں، مچھروں کے کاٹنے سے درجنوں شہری بخار میں مبتلا ہیں۔اس حوالے سے پیشنٹ پروٹیکشن کونسل پاکستان کا کہنا ہے کہ ضلعی انتظامیہ ہوش کے ناخن لے شہر میں فوری طور پر مچھر مار ادویات کا سپرے شروع کیا جائے اس سے پہلے کے حالات مزید خراب ہو جائیں اور کرونا کے بعد کوئی اور وبا پھوٹ پڑے مچھر مارنے کا اہتمام باقاعدگی سے کیا جائے اور اس کے لیے سکوارڈ کو متحرک کیا جائے جو مفت کی تنخواہ لے رہے ہیں۔ دوسری طرح سی او لاہور ہیلتھ کی ٹیمیں بھی آرام سے مزے لے رہی ہیں اور شہری مچھروں کے باعث پریشان ہیں اس حوالے سے ڈپٹی کمشنر لاہور سے بات کی گئی تو انہوں نے کہا کہ ہم جاگ رہے ہیں سپرے کا سلسلہ شروع کیا جارہا ہے جس کے لیے ٹیمیں تشکیل دی جارہی ہیں ڈینگی کی ٹیمیں الگ سے کام کریں گی۔

مزید :

میٹروپولیٹن 1 -