حکومت تاجر برادری کو بھی ریلیف دے، حماد قریشی

حکومت تاجر برادری کو بھی ریلیف دے، حماد قریشی

  

راولپنڈی(این این آئی)انجمن تاجران کمرشل مارکیٹ کے وائس چیئرمین حماد قریشی نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ تاجر برادری میں ہر کوئی اپنے کاروبار کا اور جگہ کا مالک نہیں ہے 80 فیصد دکاندار کرایہ دار ھیں جنکے پاس سیلز مین ڈیلی ویجز پر کام کرتے ھیں 23 مارچ سے کام کاروبار بند ہیں روزانہ کمانے والے اب شدید غربت کا شکار ہیں، کرایہ وصول کرنے والوں نے یکم تاریخ سے کرایہ داروں کو تنگ کرنا شروع کر دیا ہے،صرف جنرل سٹور، بیکری، سبزی فروش، قصائی،دودھ دہی والے لاک ڈاؤن سے مستثنیٰ ھیں جبکہ باقی کاروبار بند ھے حکومت باقی کاروبار والوں کو بھی 10 سے شام 5 بجے تک کا ریلیف دے یا کرایہ داروں کو ریلیف پیکیج دے۔ انہوں نے تمام تاجر برادری کے عہدے داران کو تجویزدی کہ موجودہ لاک ڈاون سے کاروباری طبقہ,ملازمت پیشہ افراد اور مزدور طبقہ بہت ذیادہ متاثر ہو رہا ہے دوکاندار کو گھریلو اخراجات کرایہ تنخواہ بجلی گیس فون کے بلزکی فکر لاحق ہے مزدور اپنے گھروالوں کے تین وقت کا کھانا کہاں سے لاے گھر والوں کی بیماریوں کے علاج اور دواکے اخراجات گرذ کے پاکستان کی %75 غریب عوام اس وقت پریشان ہے۔

ائرس کا خوف اپنی جگہ مگر لوگ دل کے عارضہ بلڈ پریشر شوگر ڈیپریشن اور نفسیاتی مریض بنتے جا رہے ہیں تاجر برادری سے گذارش ہے کے آپس میں میٹنگ کریں مشورہ کیجیے ویسے بھی تو اناج کریانہ ڈیری سبزی گوشت فروٹ مارکیٹس کھلتی ہیں اور عوام کا رش بھی کافی ہوتا ہے سب اللہ کے کرم سے اللہ کی حفظ و امان میں ہیں ابھی بھی وقت ہے کنٹرول کیا جا سکتا ہے اور تمام روز مرہ کے معاملات شروع کر دیے جائیں بازار کھول دیے جائیں بس قانون بنا دیا جائے ٹائم صبح 11:00بجے سے شام 7:00بجے تک کا فکس کردیا جائے بغیر ماسک اور دستانے(Gloves)کے کوئی شخص باہر, آفس, دوکان کسی جگہ نظر نہ ائے اگر کوئی نظر آئے تو اس کو گرفتار کر لیا جائے اس کو قانون کے تحت سزا دی جائے۔انہوں نے کہاکہ جس طرح ہیلمٹ کی پابندی کروائی جا رہی ہے دیگر پابندیاں بھی لازمی قرار دی جائیں لیکن ملکی معیشت کو بچایا جائے۔ ہر دکان, آفس,مسجد, میں صابن یا سینیٹایزر کو بھی لازم کر دیا جائے اس کے علاوہ تمام آفس, دوکانوں میں جگہ جگہ کرونا وائرس سے بچنے کی احتیاطی تدابیر لگا دی جائیں اور ان پر عمل بھی کروایا جائے جبکہ فرض نماز مسجد میں ادا کروائی جائے تو انشاء اللہ ہم اس وائرس کا مقابلہ کر لیں گے, معاشی بحران نہیں ائے گا اور غریب طبقہ بیروزگار نہیں رہے گا دعا ہو گی عبادات ہوں گی انشاء اللہ اللہ کا بہت کرم رہے گا یہ کرونا ہر جگہ سے ختم ہو جائے گا۔

مزید :

کامرس -