مزید 54وائرس کی کیسز کی تصدیق، تعداد 986ہو گئی: مراد علی شاہ

        مزید 54وائرس کی کیسز کی تصدیق، تعداد 986ہو گئی: مراد علی شاہ

  

کراچی(اسٹاف رپورٹر) وزیراعلی سندھ مراد علی شاہ نے سندھ میں مزید 54 کورونا وائرس کے کیسز کی تصدیق کردی، جس کے بعد مریضوں کی تعداد 986 ہوگئی جبکہ جاں بحق افرادکی تعداد 18 ہوگئی ہے۔اپنے ایک ویڈیو پیغام میں سید مراد علی شاہ نے صوبہ سندھ میں کورونا وائرس کی صورتحال پر بات کرتے ہوئے کہاکہ کل تک 9 ہزار585 ٹیسٹ کئے تھے جبکہ منگل کو مزید 634 ٹیسٹ کیے ہیں، کل ٹیسٹ کی تعداد 10ہزار 219 ہے۔انہوں نے کہاکہ کورونا وائرس کی مزید 54 افراد میں تصدیق ہوئی ہے جس کے بعد سندھ میں کوروناوائرس سے متاثرین کی تعداد 986 ہوگئی ہے۔انہوں نے کہا کہ کورونا وائرس سے متاثر ہونے والے 293 مریض صحتیاب ہو چکے ہیں جبکہ منگل کو مزید 16 صحتیاب ہوئے ہیں جس کے بعد اس موذی بیماری کا شکار ہونے کے بعد صحتیاب ہونے والوں کی تعداد 309 ہوگئی ہے۔وزیراعلیٰ سندھ نے کہا کہ گزشتہ 24 گھنٹوں میں ایک اور ہلاکت کے ساتھ تعداد 18ہوگئی ہے جبکہ 396 مریض اپنے گھروں میں آئیسولیشن میں ہیں اور 206 کورونا کے مریض سرکاری اور نجی اسپتالوں میں زیرعلاج ہیں۔انہوں نے کہاکہ ہم آئیسولیشن سینٹرز، سی سی یو، آئی سی یو کی تعداد بڑھا رہے ہیں۔وزیراعلی سندھ نے کورونا سے متاثر ہونے والے ڈاکٹر عبدالقادر کے متعلق بات کرتے ہوئے کہا کہ ڈاکٹر عبدالقادر کا ٹیسٹ 28 مارچ کو مثبت آیا تھا اور وہ31 مارچ کو اسپتال داخل ہوئے تھے جبکہ 6 اپریل کو ڈاکٹر عبدالقادر سومرو مالک حقیقی سے جا ملے۔سیدمراد علی شاہ نے کہا کہ ڈاکٹر عبدالقادر کے خاندان اور ڈاکٹر برادری سے تعزیت کرتا ہوں۔انہوں نے کہا کہ ڈاکٹرز فرنٹ لائن فائٹرز ہیں اور ان کو ضروری لباس دینا ہماری ذمہ داری ہے۔مراد علی شاہ نے کہا کہ ہم ڈاکٹروں کو پرسنل پروٹیکشن اکیومینٹس کی فراہمی کو یقینی بنا رہے ہیں۔

کراچی(مانیٹرنگ ڈیسک) تمام بڑے ہسپتالوں کے ڈاکٹرز نے کرونا وائرس کی صورتحال کے پیش نظر وزیراعلیٰ سندھ کو لاک ڈاؤن بڑھانے کا مشورہ دیدیا ہے۔ذرائع کے مطابق ڈاکٹرز نے خدشات کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ اگر صوبہ سندھ میں لاک ڈاون بڑھایا نہ گیا تو کرونا وائرس وبا ء سے متاثرہ مریضوں کی تعداد بہت بڑھ جائے گی،جس سے پورے ملک کا ہیلتھ کیئر نظام بیٹھ جائے گا۔ وزیراعلیٰ سندھ نے ڈاکٹروں کی تجویز پر مشاورت کرنے کا فیصلہ کیا ہے،دوسری جانب صوبہ سندھ میں لاک ڈاؤن کی وجہ سے اربوں روپے کا نقصان ہوا ہے۔ اس صورتحال کو دیکھتے ہوئے صوبائی حکومت نے مختلف طبقات کو ریلیف کیلئے آرڈیننس لانے کا فیصلہ کیا ہے، ذرائع کے مطابق مجوزہ آرڈیننس کے مندرجات پر غور مکمل کیا جا چکا ہے،اس سلسلے میں وزیراعلیٰ سندھ نے کابینہ کے سینئر ارکان سے مشاورت مکمل کر لی ہے، مجوزہ آرڈیننس میں مختلف سیکٹرز کیلئے محصولات کی وصولی نرم کی جائے گی، صوبائی محصولات کی وصولی میں رعایت بھی مجوزہ آرڈیننس میں شامل ہے،مشیر قانون مرتضیٰ وہاب کو فوری طور پر آرڈیننس کا ڈرافٹ تیار کرنے کا حکم دیدیا گیا ہے، ریلیف دینے کیلئے ٹیکسز میں تین ماہ چھوٹ دی جائے گی۔

لاک ڈاؤن دورانیہ

مزید :

صفحہ اول -