پیٹرولیم ڈویژن نے کمپنیوں سے جی آئی ڈی سی کی مد میں 471ارب وصول کرنے ہیں: پی اے سی میں انکشاف

پیٹرولیم ڈویژن نے کمپنیوں سے جی آئی ڈی سی کی مد میں 471ارب وصول کرنے ہیں: پی اے ...

  

 اسلام آباد(آئی این پی)  پارلیمنٹ کی پبلک اکاؤنٹس کمیٹی میں انکشاف ہوا ہے کہ پٹرولیم ڈویژن نے کمپنیوں سے گیس انفراسٹرکچر ڈویلپمنٹ سیس (جی آئی ڈی سی) کی مد میں 4کھرب 71ارب روپے وصول کرنے ہیں کمیٹی نے پیٹرولیم ڈویژن کو جی آئی ڈی سی سے متعلق کیسز کیلئے اچھے  وکلاء کی خدمات حاصل کرنے کی  ہدایت کرتے ہوئے معاملے پر ایک الگ میٹنگ کرنے  اور اٹارنی جنرل کو بلانے کا فیصلہ کر لیا کمیٹی نے پیٹرولیم ڈویژن کی ری اسٹرکچر نگ کرنے کی بھی ہدایت کی  پارلیمنٹ کی پبلک اکاؤنٹس کمیٹی کا اجلاس چیئرمین کمیٹی رانا تنویر حسین کی صدارت میں ہوا، اجلاس میں ماہانہ  ڈی اے سی (محکمانہ اکاؤنٹس کمیٹی) کا اجلاس  نہ کرنے والی وزارتوں اور اداروں کا معاملہ بھی زیرغور آیا چیئرمین کمیٹی نے کہا کہ ڈی اے سی کے بارے میں بار بار کہاگیا مہینے میں ایک ڈی اے سی کرنا لازمی ہے، بعض لوگوں نے ایک بھی نہیں کی اجلاس میں سیکرٹری سینیٹ، سیکرٹر ی نارکوٹکس کنٹرول  شریک ہوئے جبکہ سیکرٹری اقتصادی امور ویڈیو لنک کے ذریعے اجلاس میں شریک ہوئے جبکہ سیکرٹری اسٹیبلشمنٹ ڈویژن اور چیئرمین نیب اجلاس میں نہ آئے، چیئرمین نیب کے بجائے ڈائریکٹر فنانس نیب اجلاس میں شریک ہوئے جس پر کمیٹی نے برہمی اور ناپسندیدگی  اظہار کیا  چیئرمین کمیٹی رانا تنویر حسین نے کہا کہ چیئرمین نیب کا اگر اتنا بڑا اسٹیٹس ہے تو پھر نیب کاپرنسپل اکاؤنٹنگ آفیسر کسی اور کو بنا دیں، انہوں نے ڈی اے سی کیوں نہیں کی کمیٹی نے ڈائریکٹر فنانس نیب اور اسٹیبلشمنٹ ڈویژن حکام کو واپس بھیج دیا   رکن کمیٹی سردار ایاز  صادق نے کہا کہ کوئی ایکشن تجویز کریں تاکہ وہ رولز توفالو کریں، اگر ایکشن پر عملدرآمد نہیں ہوتا تو ہمیں مستعفی ہونا چاہیے اجلاس کے دوران  پیٹرولیم ڈویژن کے سال    2019-20  کے آڈٹ اعتراضات کا جائزہ لیا گیا آڈٹ حکام نے کمیٹی کو گیس انفراسٹرکچر ڈویلپمنٹ سیس (جی آئی ڈی سی) کی مد میں 83294ملین روپے کی ریکوری نہ ہونے  سے متعلق معاملے پر بریفنگ دی، ڈی جی گیس پیٹرولیم ڈویژن نے کمیٹی کو بتایا کہ جی آئی ڈی سی کی مد میں کل 788ارب روپے وصول کیئے جانے تھے، جن میں سے  317 ارب روپے ریکور ہو چکے ہیں جبکہ 471ارب  ریکور کرنے ہیں رکن کمیٹی خواجہ شیراز نے کہا کہ جن کمپنیوں کے اسٹے آرڈرز ہیں ان کے کتنے بقایاجات ہیں،  رکن کمیٹی شیخ روحیل اصغر نے کہا کہ اطلاع کے مطابق  ایم ڈی ایس این جی پی ایل  کی تنخواہ 68 لاکھ ہے،سیکرٹری پیٹرولیم ڈویژن نے کہا کہ میں تنخواہ کے بارے میں تصدیق کرکے بتادوں گا۔ اجلاس کے دوران چیئرمین کمیٹی نے سیکٹری پیٹرولیم ڈویژن سے کہا کہ وزارت کی ری اسٹرکچرنگ کریں ، آپ کا وزارتی کنٹرول آہستہ آہستہ ختم ہوتا جا رہا ہے، ہر وزارت کا یہی حال ہے۔ 

پی اے سی اجلاس 

مزید :

صفحہ آخر -