معاشی صورتحال بہتر بنانے کیلئے تاجروں کو ٹیکس ادا کرکے فائیلر بننا ہوگا،ایس ایم منیر

معاشی صورتحال بہتر بنانے کیلئے تاجروں کو ٹیکس ادا کرکے فائیلر بننا ہوگا،ایس ...

کراچی (اکنامک رپورٹر)یونائیٹڈ بزنس گروپ(یوبی جی) کے سرپرست اعلیٰ ایس ایم منیر نے کہا ہے کہ حکومت نے بجلی کے بحران کو دور کرنے کیلئے جو سولرمنصوبے شروع کئے ہیں وہ تین سال کی مدت میں مکمل ہوجائیں گے جس کے بعد ملک میں بجلی کے مسائل ختم ہوجائیں گے،پاکستان آرمی وزیرستان میں طالبان کے خلاف جو جنگ کررہی ہے اس سے شدت پسندی کا خاتمہ ہوجائے گا جبکہ کراچی میں بھی امن وامان کی صورتحال آئیڈیل ہے،ضرورت اس بات کی ہے کہ ملک کی معاشی صورتحال بہتر ہو اور اس کیلئے تاجروں کو ٹیکس ادا کرکے فائیلر بننا ہوگا،ایف بی آر بھی تاجروں کو ڈنڈے سے نہ ہانکے بلکہ انہیں ٹیکس نیٹ میں آنے کی ترغیب دے۔انہوں نے ان خیالات کا اظہارمقامی ہوٹل میں پاکستان میں لسوتھو کے اعزازی قونصل ،چیئرمین پاکستان کاٹن فیشن اپیرل مینوفیکچررزاینڈ ایکسپورٹرزایسوسی ایشن ڈاکٹرشہزاد ارشد کی جانب سے اپنے اور صدر ایف پی سی سی آئی میاں محمدادریس کے اعزاز میں دیئے گئے عشائیہ سے خطاب کے دوران کیا ۔ا

س موقع پر میاں محمدادریس،یوبی جی کے مرکزی سیکریٹری جنرل زبیرایف طفیل،یوبی جی سندھ زون کے چیئرمین خالد تواب،یوبی جی کے ترجمان گلزار فیروز اور میزبان شہزاد ارشد نے بھی خطاب کیا جبکہ تقریب میں ڈاکٹر مرزا اختیار بیگ،وسیم وہرہ،اکرام راجپوت،جی آر ارشد،جاوید بلوانی،یحییٰ پولانی،فاروق شیخ،ناصر الدین شیخ،منیرسلطان،داؤد عثمان جھکورا،سلیم میمن،ظفراقبال،کلیم صدیقی،نوراحمدخان،اکبرفاروقی،محمدرضوان،فرخ مظہر،دانس خان،وحیدشیخ،کیپٹن معیز،خواجہ عثمان،حاجی ناصر ترک اور دیگر تاجروں اور صنعتکاروں کی بڑی تعداد نے شرکت کی۔ایس ایم منیر نے اپنی تقریر میں کہا کہ ایف پی سی سی آئی کے صدرکے طور پر میاں محمدادریس کی شکل میں بزنس کمیونٹی کو ایک لجنڈ میسر آیا ہے جس فیڈریشن کے اخراجات پر نہ صرف قابو پایا اور ماضی میں کی گئی لوٹ مار اور کرپشن کا خاتمہ کیابلکہ آج ایف پی سی سی آئی کے اکاؤنٹ میں4کروڑ روپے جمع ہوچکے ہیں جبکہ ایف پی سی سی آئی پر پہلے جو لوگ قابض تھے انہوں نے ادارے کو کنگال کردیا تھا۔انہوں نے کہا کہ حال ہی میں ہماری اور ایف پی سی سی آئی کے عہدیداران کی وزیرخزانہ اسحاق ڈار سے متعدد ملاقاتیں ہوئیں اور ان میں وزیر خزانہ نے بزنس کمیونٹی کے مسائل حل کرنے کا وعدہ بھی کیا اس کے علاوہ انہوں نے ایکسپورٹرز کے ریفنڈز بھی فوری دینے کی ہدایت کی،وزیرخزانہ نے بزنس کمیونٹی کی مشکلات سے آگاہی اور حل کیلئے ایک ہائی پاور کمیٹی بھی بنادی ہے جس میں ایف پی سی سی آئی کے ممبران بھی شامل ہیں،میں سمجھتا ہوں کہ بزنس کا پہیہ چلے گا تو ایکسپورٹ بھی ہوگی اور ایمپلائمنٹ بھی بڑھے گی،حقیقت یہ ہے کہ اس وقت ایکسپورٹ ساڑھے چارفیصد گرچکی ہے کیونکہ پنجاب میں گیس اوربجلی کے بحران کی وجہ سے صنعتیں بند ہورہی ہیں،کراچی میں ہم اپنا ہی چوری ہونے والا پانی کروڑوں روپے خرچ کرکے خرید رہے ہیں مگر انہیں روکنے والا کوئی نہیں ہے۔انہوں نے بتایا کہ ٹی ڈی اے پی میں کرپشن زیرو ہوچکی ہے اور اب اس ادارے میں کوئی لوٹ مار نہیں کرسکے گا۔ایس ایم منیر نے کہا کہ ایف پی سی سی آئی میں سال2016کیلئے الیکشن آن ہوگیا ہے اور یوبی جی کے تمام لیڈران نے پنجاب اور کے پی کے کا دورہ کرنے کی حکمت عملی تیار کرلی ہے جبکہ جلد ہی اندرون سندھ میں چیمبرز اور ایسوسی ایشن کے دورے کئے جائیں گے۔انہوں نے کہا سراج قاسم تیلی نے ہم سے کہا کہ فیڈریشن سے تمام جعلی ایسوسی ایشنز کا خاتمہ کیا جائے اور ہم نے انکی یہ تجویز مان کر ایسوسی ایشنز کی اسکروٹنی کرکے 14جعلی ایسوسی ایشنز کی فہرست حکومت کو بھیج دی ہے اور اس سلسلے میں جنید ماکڈا سمیت کئی افراد نے بہت محنت سے کام کیا ہے۔ایف پی سی سی آئی کے صدر میاں محمدادریس نے کہا کہ فیڈریشن چیمبر میں تبدیلی آچکی ہے اور بزنس کمیونٹی کی یونائٹیڈ بزنس گروپ کے لیڈران پر اعتماد مزید مضبوط ہوا ہے کیونکہ ہم پورے پاکستان کے تاجرنمائندوں کو ساتھ لے کر چل رہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ تاجروں کو ٹیکس نیٹ میں آنا ہوگا اور ہم نے حکومت سے کہا ہے کہ تاجربرادری پر ہراسمنٹ کی تلوار نہ لٹکائے بلکہ انہیں ٹیکس نیٹ میں آنے پر آمادہ کرے۔انہوں نے کہا کہ ہم نے کاروباری برادری کو انکاکھویا ہوا مقام واپس دلایا ہے اور اب تاجروں کو لاٹھی سے ہانکنے کا زمانہ گزر گیا،ہر فیصلے ڈرائنگ روم کے بجائے مشاورت سے کئے جارہے ہیں کیونکہ ہم نے احتساب کے کلچر کو فروغ دیا ہے۔زبیر طفیل نے کہا کہ یونائیٹڈ بزنس گروپ نے فیڈریشن چیمبر آف کامرس میں ایک نئے دور کا آغازکردیا ہے،ایف پی سی سی آئی تاجروں اورحکومت کے مابین ایک مضبوط پل کا کردار ادا کررہا ہے۔انہوں نے کہا کہ تاجروں اورایف بی آر کے مابین ودہولڈنگ ٹیکس کے حوالے سے جاری کشمکش کو دور کرنے کیلئے ہم نے حکومت کو راضی کرلیا تھا کہ چھوٹے تاجر کو سیلزٹیکس نظام سے باہر کردیا جائے گا اور جومنافع ہوگا اسی پر ٹیکس لیا جائے گا،تاجروں نے حکومت سے جو10مطالبات کئے تھے ان میں سے حکومت نے9مطالبات مان لئے تھے اور آخری مطالبہ ودہولڈنگ ٹیکس تھا جسے ختم کرنے کا اختیار پارلیمنٹ کے پاس تھا ،کیونکہ یہ صدارتی آرڈیننس کے ذریعہ نافذ ہوا تھا جسے ایک اور صدارتی آرڈیننس سے ہی یہ معطل کیا جاسکتا ہے۔،وزیر خزانہ اسحاق ڈار بیرون ملک کے دورے پر ہیں اور قوی امید ہے کہ ہفتے کو ان سے ان مسائل پر مزید بات چیت ہوگی۔خالدتواب نے کہا کہ ایس ایم منیر جیسے مزید لیڈرز پاکستان کو مل جائیں تو ملک کی تقدیر بدل سکتی ہے۔انہوں نے کہا کہ تاجرٹیکس دینے سے نہیں گھبراتے مگر ایف بی آر کو پروسیجر آسان بنانا چاہیئے۔گلزار فیروز نے کہا کہ فیڈریشن چیمبر کے آئندہ انتخابات میں یوبی جی 100فیصد کامیابی حاصل کریگا،ملک بھر کے چیمبرز اور ایسوسی ایشنز یونائٹیڈ بزنس گروپ کے حامی نمائندے ایف پی سی سی آئی کی ایگزیکتو کمیٹی اور جنرل باڈی میں بھیجیں تاکہ موثر انداز میں نمائندگی ہوسکے۔میزبان ڈاکٹر شہزاد ارشد نے کہا کہ حکومت انرجی سیکٹر کے مسائل پرقابو پانے کیلئے بھرپور انداز میں کام کرر ہی ہے اور رواں مالی سال کے دوران 34ارب روپے انرجی سیکٹر کیلئے رکھے گئے ہیں جس سے عنقریب انرجی بحران دور ہوگا۔

مزید : کامرس