’’پاکستان 10برس میں 49ارب ڈالر غیر ملکی قرض لیا ،ادائیگی صرف 25ارب کی‘‘

’’پاکستان 10برس میں 49ارب ڈالر غیر ملکی قرض لیا ،ادائیگی صرف 25ارب کی‘‘

اسلام آباد( اے این این ) پاکستان نے غیر ملکی قرضوں کی مد میں 10سالوں کے دوران 49ارب ڈالر کا قرضہ حاصل کیا جس میں سے زیادہ تر عوامی فلاح و بہبود کے بجائے حکومتی اصلاحات اور بجٹ کی مد میں استعمال کیاگیا ۔ایک معروف پاکستانی انگریزی جریدے کی رپورٹ کے مطابق پاکستان نے 10سالوں کے دوران 49ارب ڈالر کا قرضل کیا جس میں سے زیادہ تر کو بجٹ کی مد میں استعمال کیاگیا ۔رپورٹ کے مطابق پاکستان ہر سال غیر ملکی قرضوں کی مد میں 5ارب ڈالر حاصل کرتی ہے جبکہ بیرونی قرض دہندگان کو صرف 2.5ارب ڈالرادائیگی کرتی ہے بقیہ قرضوں کو واجب الاد ا سٹاک میں ضم کردیتی ہے ۔بین الاقوامی مالیاتی فنڈ(آئی ایم ایف)سے 2008 میں 7.7ارب ڈالر کا قرضہ حاصل کرنے کے باعث گزشتہ چند سالوں سے ادائیگی کی رقوم میں اضافہ ہورہاہے ۔2005 سے جون 2015 تک بین الاقوامی قرض دہندگان کے پاکستان کو 49.2ارب ڈالر کے قرضے میں سے 30.7ارب ڈالر کی تفصیلات سیکرٹری اقتصادی امور ڈویژن (ای اے ڈی)نے قائمہ کمیٹی برائے خزانہ،ریونیو و اقتصادی امور فراہم کیں ۔یہ قرضہ اقتصادی امور ڈویژن کے ذریعے حاصل کیاگیا ۔مزید برآں سٹیٹ بینک آف پاکستان نے آئی ایم ایف کے ساتھ دو الگ قرضوں کے معاہدوں پر دستخط کیے ہیں جن میں سے پہلا 2008 اور دوسرا 2013 میں کل 14بلین ڈالر حاصل کیے گئے ۔2008 کے کل بیرونی قرضوں کا حجم 11ارب ڈالر تھا جس میں سے آئی ایم ایف کوصرف 7.7ارب ڈالرادا کیے گئے۔آئی ایم ایف کے دوسرے پیکیج کا موجودہ حجم 6.2ارب ڈالر ہے جبکہ صرف 4.2ارب ڈالر کی ا دائیگی کی گئی ۔وفاقی وزارت خزانہ نے2005 سے 2015 تک مالیات اصل دائر سرمایہ بین الاقوامی بانڈز کے ذریعے 4.6ارب ڈالر کا قرضہ حاصل کیا ۔آئی ایم ایف کے بعد عالمی بینک 9.2ارب ڈالر قرضہ دینے والا دوسرا بڑا قرض دہندہ رہا ۔اس کے بعد ایشین ڈویلپمنٹ بینک سے 8.4ارب ڈالر کا قرضہ حاصل کیاگیا اسی طرح اسلامک ڈویلپمنٹ بینک نے 5ارب ڈالر کا قرضہ دیا ۔گزشتہ 10سالوں میں دو طرفہ قرضوں کا حجم بدستور 7.9ارب ڈالر پر رہا ۔دوطرفہ قرض دہندگان میں چین 5.3ارب ڈالر قرضے کے ساتھ سرفہرست رہا اس کے بعد جاپان نے 1.1ارب ڈالر کا قرضہ دیا۔سعودی عرب نے 10سالوں میں سالانہ 100ملین ڈالر کے حساب سے صرف 979ملین ڈالر قرضہ دیا ۔قائمہ کمیٹی کے چیئرمین سلیم مانڈوی والا نے قرضوں کی ادائیگی کے بڑھتے حجم پر شدید تحفظات کااظہار کیا ۔بجٹ کی مد اور حکومتی اصلاحات کیلئے قرضوں کے حصول میں مسلسل اضافہ کے حوالے سے حکومت کو بھی انتباہ کردیاگیا ۔گزشتہ دس سالوں کے دوران بجٹ کی سپورٹ کیلئے 17ارب ڈالر قرضہ حاصل کیاگیا ۔

مزید : صفحہ اول