حکومت کی پہلی ذمہ داری غربت کو ختم کرناہے ،ووٹ کے تقدس کی بحالی تک حکمرانوں کو عوام کی فکر نہیں ہوگی :عمران خان

حکومت کی پہلی ذمہ داری غربت کو ختم کرناہے ،ووٹ کے تقدس کی بحالی تک حکمرانوں ...
حکومت کی پہلی ذمہ داری غربت کو ختم کرناہے ،ووٹ کے تقدس کی بحالی تک حکمرانوں کو عوام کی فکر نہیں ہوگی :عمران خان

  

وہاڑی(مانیٹرنگ ڈیسک)پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان نے کہاہے کہ حکومت کو غربت کو کم کرنا حکومت کی سب سے پہلی اور بڑی ذمہ داری ہے لیکن پاکستان میں غریب کسان دن بدن پس رہاہے اور امیر امیرتر ہوتاجارہاہے ،کسانوں کی مدد نہ کی گئی تو غربت دور نہیں ہو گی ،ووٹ کے تقدس کے بحال ہونے تک حکمرانوں کو عوام کی فکر نہیں ہوگی۔

وہاڑی میں کسان کنونشن سے خطاب کرتے ہوئے عمران خان نے کہاکہ وہ جب حکومت میں آئیں گے تو سب سے پہلے کاٹن انسی ٹیوٹ بنائیں گے اور ان تعلیمی اداروں کو حکومت نہیں بلکہ کسان خود چلائیں گے ،جہاں کھیتی باڑی سے متعلق آگاہی دی جائے گی ،انہوںنے کہا کہ دوسرا کام یہ کریں گے کہ پوری دنیا سے ایکسپرٹس کو بلائیں گے جو کہ پانی کے صحیح استعمال اورپانی کو محفوظ کرنے کا لائحہ عمل بتائیں گے ۔

عمران خان کا کہناتھاکہ پاکستان میں اس وقت تک غربت کم نہیں ہوگی جب تک چھوٹے کسان خوشحال نہیں ہوں گے ،وہاڑی میں اس وقت 80ہزار خاندان کھیتی باڑی کررہے ہیں اور جب تک وہ خاندان غربت کی لکیر سے باہر نہیں آئیں گے اس وقت تک خوشحالی نہیں آئے گی ۔انہوںنے کہا کہ پاکستان تحریک انصاف نے دو سال الیکشن کا نظام ٹھیک کرنے پر لگائے ہیں کیونکہ جب تک ووٹ کا تقدس بحال نہیں ہوگا اس وقت تک حکمرانوں کو عوام کی فکر نہیں ہوگی ،جب حکمرانوں کو پتہ ہوگا کہ اگر وہ کام نہیں کریں گے تو کسان ووٹ نہیں دے گا تو اس وقت حکمران کام کریں گے اور خوشحالی آئے گی ۔

عمران خان نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ چین نے 20سالوں میں 40کروڑ لوگوں کو غربت کی لکیر سے باہر نکالا ،میںجب چین گیا تو میں نے پوچھا کہ آپ نے یہ کیسے ممکن بنایا تو مجھے بتایا گیا کہ چھوٹے کسانوں کی مدد کرکے ،انہیں سہولتیں فراہم کرکے اسے ممکن بنایا گیاہے ۔انہوںنے کہا کہ جب تک ہم چھوٹے کسانوں کو سہولتیں نہیں دیں گے اس وقت پاکستان ترقی نہیںکرے گا اور پیدوار بھی نہیں بڑھے گی ،جب کسا ن خوشحال ہو گا تو پیدوار بھی بڑھے گی جس پاکستان کو اربوں روپے کا فائدہ ہوگا ۔

چیئرمین تحریک انصاف نے کہا کہ یہ جو پانی آج ملک بھرمیں تباہی مچا رہاہے اسے چھوٹ ڈیم بنا کر محفوظ کیا جاسکتاہے جس کے بعد یہی پانی پاکستان کو قابل ستائش فائدہ پہنچائے گا ،فصلوں میں استعمال کیا جاسکے ،فصلیں خراب نہیں ہوں گی ۔

انہوں نے کہاکہ بھارتی حکومت کسانوں سے ڈرتی ہے کیونکہ انہیں پتہ ہے اگرکسانوں کا م نہیں کیا تو وہ ووٹ نہیں دیں گے ،بھارت میں کسانوں کو اپنے ووٹ کی طاقت کا پتہ ہے اس لیے بھارتی حکومت اپنے کسانوں سے ڈرتی ہے ۔عمران خان نے کہا کہ بھارت میں ڈی اے پی کھاد کی ایک بور ی 950روپے کی ہے جبکہ پاکستان میں یہی بوری 3800سوروپے کی ہے ۔

مزید : وہاڑی /اہم خبریں