”نواز شریف اور آصف زرداری کا رابطہ ہو گیا ہے اور بہت جلد۔۔۔“ سینئر صحافی نے تہلکہ خیز دعویٰ کر دیا، یہ رابطہ کب، کیوں اور کس کے ذریعے ہوا؟ ایسی بات کہہ دی کہ پاکستانیوں کو اپنے کانوں پر یقین نہیں آئے گا

”نواز شریف اور آصف زرداری کا رابطہ ہو گیا ہے اور بہت جلد۔۔۔“ سینئر صحافی نے ...
”نواز شریف اور آصف زرداری کا رابطہ ہو گیا ہے اور بہت جلد۔۔۔“ سینئر صحافی نے تہلکہ خیز دعویٰ کر دیا، یہ رابطہ کب، کیوں اور کس کے ذریعے ہوا؟ ایسی بات کہہ دی کہ پاکستانیوں کو اپنے کانوں پر یقین نہیں آئے گا

  



لاہور (ڈیلی پاکستان آن لائن) سینئر صحافی و تجزیہ کار ڈاکٹر شاہد مسعود نے دعویٰ کیا ہے کہ نواز شریف کا آصف زرداری کیساتھ رابطہ ہو گیا ہے جس کے بعد میثاق جمہوریت کا نام دوبارہ سامنے آیا ہے۔ بہت جلد نواز شریف آصف علی زرداری کا نام لے کر ان سے جمہوریت بچانے کی درخواست کریں گے اور پھر آرٹیکل 62 اور63 کو اسمبلی کے ذریعے ختم کرنے کی کوشش کی جائے گی۔

یہ بھی پڑھیں۔۔۔ ریحام خان کی قرآن اٹھا کر الزام تراشی کردارکشی کی نئی کوشش ،بتایا جائے دورہ سوات میں زیر استعمال گاڑی کس کی تھی، سریناہوٹل میں کس کس سے ملاقاتیں کیں، مراد سعید

نجی ٹی وی کے پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے ڈاکٹر شاہد مسعود نے کہا کہ ”دلچسپ بات یہ ہے کہ میاں نواز شریف کا پچھلے 72 گھنٹوں میں دبئی میں موجود زرداری صاحب سے رابطہ ہوا ہے۔ رابطوں کیلئے ایک چینل تو اسحاق ڈار تھے لیکن وہ تو دھبڑ دوس ہو گئے اور اب ایک اور چینل بھی ہے جس کے ذریعے زرداری سے رابطہ کیا گیا۔

رابطہ ہونے پر نواز شریف نے زرداری سے کہا کہ دیکھیں، میرے بعد آپ کی باری ہے بھائی، پتہ ہے نا؟ انہوں نے کہا کہ ہاں پتہ ہے، نواز شریف نے کہا کہ بتاﺅ پھر کیا کریں، زرداری صاحب نے جواب دیا کہ آپ بتاﺅ کیا کریں۔ تو اس رابطے کے بعد میاں نواز شریف نے کل کہا کہ میثاق جمہوریت بحال ہونا چاہئے لیکن زرداری کا یہ کہنا ہے کہ جب میرے اوپر مصیبت آئی تو آپ سب بھاگ گئے، کسی نے بات نہ کی اور پلٹ کر بھی نہ پوچھا۔“

انہوں نے مزید کہا کہ آصف زرداری نے جو تقریر کی تھی وہ دونوں کی طرف سے آنی تھی، زرداری صاحب نے تقریر کر دی اور پلٹ کر دیکھا تو نواز شریف غائب تھے، اس کے بعد زرداری صاحب ملک سے باہر اندر، باہر اندر، اس وقت سے آپ دیکھ لیں، ایسا ہی ہے۔ اب زرداری نے کہا کہ جب تمہارے اوپر مصیبت آتی ہے، چاہے پارلیمینٹ میں آئے یا دھرنے کی صورت میں تو میں تو ساتھ کھڑا ہوتا ہوں، میرے اوپر مسئلہ آیا تو آپ بھاگ گئے۔ یہ جو 4 سے 5 دن کے دوران چلتا رہا کہ کابینہ کا فیصلہ نہیں ہو رہا، یہ انہیں دنوں کا قصہ ہے۔

ڈاکٹر شاہد مسعود نے کہا کہ ”نواز شریف نے پھر زرداری صاحب سے کہا کہ تمام عناصر جن سے آپ کو تکلیف تھی، انہیں میں کابینہ سے باہر کر رہا ہوں اور سب سے پہلے نام لیا چوہدری نثار کا، انہوں نے کہا کہ چوہدری نثار کو باہر کر رہا ہوں، اب آپ بتائیں کہ آپ میرا ساتھ دیں گے؟ اس پر آصف علی زرداری نے ایک اور شرط رکھی کہ آپ میرا نام لے کر کہیں کہ میں آصف زرداری سے درخواست کرتا ہوں کہ جمہوریت کو بچائیں۔ نواز شریف نے کہا کہ ایک دم آپ کا نام لے کر کہہ دوں تو بڑا مسئلہ ہو جائے گا، پھر طریقہ یہ نکالا کہ میثاق جمہوریت کو بحال کیا جائے اور پھر سوچا جائے، لیکن انہوں نے زرداری صاحب کا نام لینا ہے کیونکہ یہ انہوں نے شرط رکھی ہے۔

آپ نوٹ کریں کہ پچھلے 48 گھنٹوں میں پیپلز پارٹی خاموش ہو گئی ہے، بلاول تو ایسے ہی ہے، اصل فیصلہ تو زردری ہی کریں گے، بلاول کو چھوڑیں، وہ اچھے ہیں لیکن بلاول کو نہیں پتہ کہ کیا ہو رہا ہے۔ زرداری نے کہا کہ آپ میثاق جمہوریت سے شروع کریں لیکن میرا نام ضرور لیں، اب تک کی کنڈیشنز کے مطابق میاں صاحب کو زرداری صاحب کا نام لے لینا چاہئے لیکن ہو سکتا ہے کہ میری اس گفتگو کے بعد یہ منصوبہ بھی دھبڑ دوس ہو جائے۔ جیسا کہ کراچی میں گورنر سندھ کا 20 ارب روپے کا، ایم کیو ایم لندن اور پاکستان کا پلان ختم ہو گیا تھا۔ “

یہ بھی پڑھیں۔۔۔ مراد سعید کی جانب سے سوالات اٹھانے کے بعد ریحام خان بھی میدان میں آگئیں ،ایسی باتیں کہہ دیں کہ تحریک انصاف کے رہنما کو زور دار جھٹکا دے دیا

ڈاکٹر شاہد مسعود نے یہ دعویٰ بھی کیا کہ ”یہ میثاق جمہوریت کا نام اس رابطے کے بعد لیا گیا ہے، زرداری صاحب نے کہا کہ میرا نام لے کر کہو پھر میں سوچتا ہوں۔ اس کے بعد کرنا یہ ہے کہ اچانک پارلیمینٹ کا سیشن ہو اور اس میں دو تہائی اکثریت سے آرٹیکل 62 اور 63 ختم ہو جائے، اور نواز شریف کی نااہلی واپس ہو جائے اور آئندہ بھی کوئی نہ کر پائے، اور پچھلی جو نااہلیاں ہوئیں وہ بھی واپس ہو جائیں۔“

مزید : ڈیلی بائیٹس


loading...