کسی کلیریکل غلطی پر وزیر اعظم کو نااہل قرار دینا مناسب نہیں : شاہد خاقان عباسی

کسی کلیریکل غلطی پر وزیر اعظم کو نااہل قرار دینا مناسب نہیں : شاہد خاقان ...

  



اسلام آباد ( آن لائن ) وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی نے کہا ہے کہ آرٹیکل 62-63میں ابہام ہے ، کسی کلیریکل غلطی پر وزیراعظم کو نااہل قرار دینا مناسب نہیں،آئین کے آرٹیکل62-63میں تبدیلی کیلیے تمام جماعتوں سے رابطہ کرونگا،انتخابات سے قبل کوئی اتفاق رائے پیدا ہو جائے تو بہتر ہو گا ، جب تک پارٹی کہے گی وزارت عظمی کی ذمہ داریاں نبھاؤں گا، پارٹی کہے گی تو شہباز شریف کیلئے وزارت عظمیٰ چھوڑ دوں گا ، عائشہ گلالئی کا معاملہ ایوان میں حل ہونا چاہئیے ، جمہوریت کا حسن ہے کہ 28جولائی کو اچانک حکومت ختم ہوئی اور 4 دن بعد دوبارہ حکومت قائم ہو گئی ، سیاسی رہنماؤں کو تحفظ فراہم کرنا حکومت کی ذمہ داری ہے ، نواز شریف کی مرضی ہے کہ وہ جیسے چاہیں گھر جائیں، عمران خان جلسے اور ریلیاں نکالتے ہیں ان کو سکیورٹی حکومت دیتی ہے ۔ نجی ٹی وی کو گزشتہ روز انٹر ویو دیتے ہوئے وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی نے کہا کہ کراچی نہیں چلے گا تو پاکستان نہیں چلے گا،ایم کیو ایم کی سپورٹ کسی سودے بازی کا نتیجہ نہیں ، کراچی میں ماس ٹرانزٹ کا منصوبہ سب سے پہلے مسلم لیگ ن نے شروع کیا ہے ، فاٹا کے عوام کے حقوق کے لیے اتفاق رائے ضروری ہے،سیاسی راہنماؤں کو تحفظ فراہم کرنا ھکومت کی ذمہ داری ہے۔ انہوں نے کہا کہ کسی کلیریکل غلطی پر وزیراعظم کو نااہل قرار دینا مناسب نہیں،آئین کے آرٹیکل62-63میں تبدیلی کیلیے تمام جماعتوں سے رابطہ کرونگا، انتخابات سے قبل کوئی اتفاق رائے پیدا ہو جائے تو بہتر ہو گا ، آرٹیکل 62-63 میں ابہام دور ہونا چاہئیے ،یہ درست نہیں ایوان میں وزیراعظم کی کہی بات غلط نکل آئے تونا اہل کردیاجائے، بیٹے کی کمپنی سے تنخواہ نہ لینے پر نااہل کرنے جیسی باتیں ناموزوں ہیں۔ وزیر اعظم نے کہا کہ ہم دب کر کسی سے بات نہیں کریں گے،دنیاسے برابری کی سطع پر بات ہو گی، افغانستان ہو یا بھارت برابری کی سطع پر بات ہو گی ، پاکستان کے حقوق کا سودا کیے بغیر افغانستان اور بھارت سے بات ہو گی ، پوری دنیا نے تسلیم کیا کہ ایل این جی منصوبہ پاکستان نے کامیابی سے لگایا ہے۔ انہوں نے کہا کہ شیخ رشید اور پنڈی کے عوام 30 سال سے مجھے جانتے ہیں ، سیاست میں آنے سے قبل ہمارے اثاثے کئی گنا زیادہ تھے ، پارلیمانی تاریخ کے 30 برسوں میں عائشہ گلا لئی جیسا واقعہ نہیں دیکھا ، عائشہ گلالئی کا معاملہ ایوان میں حل ہونا چاہئے نہ کہ یہ بازاروں اور چوراہوں میں اس کے چرچے ہوں ، عائشہ احد پارلیمان کا حصہ نہیں ، ان کے پاس دیگر فورم موجود ہیں وہ وہاں جا کر شکایت کریں ۔ ۔ وزیر اعظم نے کہا کہ جب تک پارٹی کہے گی وزارت عظمیٰ کی ذمہ داریاں نبھاؤں گا،اگر پارٹی چاہے تو اپنے پرانے منصب پر بھی چلا جاؤں گا ، اگر میں وزیر اعظم کی سیٹ چھوڑتا ہوں اور کوئی اور وزیر اعظم بنتاہے تو تب بھی مسلم لیگ ن کی پالیسیاں جاری رہیں گی ، 49رکنی کابینہ پر تنقید ہو رہی ہے ، تنقید کرنا آسان ہے لیکن میرا ماننا ہے کہ کوئی بھی وزیر اکھٹے دو ڈویژن نہیں چلا سکتا ۔

شاہد خاقان عباسی

اسلام آباد(صباح نیوز) وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے کہاہے کہ کشمیریوں کے حق خود ارادیت کی اخلاقی، سفارتی اور سیاسی حمایت جاری رکھیں گے۔وزیراعظم شاہد خاقان عباسی سے وزیراعظم آزاد کشمیر راجہ فاروق حیدر نے ملاقات کی جس میں سیاسی امور اور آزادکشمیر کی ترقی کے حوالے سے بات چیت کی گئی۔اس موقع پر وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے کہا کہ پاکستانی حکومت اور عوام مقبوضہ کشمیر کے عوام کے ساتھ کھڑے ہیں جب کہ کشمیریوں کے حق خود ارادیت کی اخلاقی، سفارتی اور سیاسی حمایت جاری رکھیں گے۔بعدازاں ائیر چیف مارشل سہیل امان نے وزیراعظم شاہد خاقان عباسی کیساتھ ملاقات کی جس میں پاک فضائیہ کے پیشہ واارانہ امور اور آپریشنل تیاریوں پر تبادلہ خیال کیاگیا۔ ائیر چیف مارشل نے وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی کو پاک فضائیہ کی پیشہ ورانہ صلاحیتوں سے متعلق بریفنگ دی جس پر ان کی جانب سے اطمینان کا اظہار کیا گیا وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی نے ملکی دفاع کے لئے پاک فضائیہ کے کر دار کو سراہتے ہوئے ملکی سرحدوں کی حفاظت کیلئے ان کی بھرپورحمایت اور ساتھ دینے کے عزم کا اعادہ کیا جبکہ توقع ظاہر کی ملکی سالمیت کو برقرار رکھنے کیلئے پاک فضائیہ اپنی صلاحیتں بھرپور انداز میں بروئے کار لائے گی ۔دریں اثناء وزیراعظم شاہد خاقان عباسی سے وزیر داخلہ احسن اقبال نے بھی ملاقات کی ۔ وزیر داخلہ نے وزیراعظم شاہد خاقان عباسی کو سی پیک پر عملدرآمد کے حوالے سے بریفنگ دی جبکہ وزیر داخلہ نے وزیراعظم کو نیشنل ایکشن پلان میں پیش رفت سے بھی آگاہ کیا ۔

وزیراعظم/ملاقاتیں

اسلام آباد(صباح نیوز)وزیراعظم پاکستان شاہد خاقان عباسی کو افغان صدر اشرف غنی نے ٹیلی فون کرکے وزیراعظم منتخب ہونے پر مبارکباد دیتے ہوئے پاکستان میں جمہوری انتقال پر اظہار اطمینان کیا ہے ۔ وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے افغان صدر سے اظہار تشکر کیا اور کہا کہ دہشتگردی دونوں ملکوں کا مشترکہ دشمن ہے جبکہ خطے میں امن واستحکام کیلئے افغانستان کے ساتھ مل کر کام کریں گے اور خطے کو درپیش توانائی مسائل پر مل کر قابو پائیں گے ۔دونوں رہنماؤں میں پاکستان اور افغانستان میں تجارتی سرگرمیوں کو بہتر بنانے پر بھی اتفاق ہوا ۔

افغان صدر/ٹیلیفون

مزید : صفحہ اول


loading...