چودہ اگست سے پنجاب فوڈ اتھارٹی پورے صوبے میں متحرک

چودہ اگست سے پنجاب فوڈ اتھارٹی پورے صوبے میں متحرک

  



لاہور(کامرس رپورٹر) وزیر اعلیٰ پنجاب کے صحت مند پنجاب ویژن کی تکمیل اور ملاوٹ مافیا کے صوبہ بھر سے خاتمے کی خاطر پنجاب فوڈ اتھارٹی کی توسیع کا کام تکمیل کے آخری مراحل میں ہے۔ اس سلسلے میں بھرتی کیے گئے 525افسران و دیگر عملے کیلئے استقبالیہ تقریب کا اہتمام کیا گیا جس میں چےئرمین پنجاب فوڈ اتھارٹی عامر حیات ہراج ، ڈی جی فوڈ اتھارٹی نورالامین مینگل ، ایڈیشنل ڈائریکٹر جنرل آپریشن رافعیہ حیدر اور ایڈیشنل ڈائریکٹر جنرل ایڈمین اینڈ فنانس ظریف ستی نے بھی شرکت کی۔ عامر حیات ہراج نے فوڈاتھارٹی میں بھرتی ہونے والے عملے کو خوش آمدید کہتے ہوئے کہا کہ وزیراعلی شہباز شریف نے اتھارٹی کے کام کو سراہتے ہوئے نئے عملے کی بھرتیوں کیلئے اقدامات کی اجازت دی اور اس کیلئے ضروری فنڈزکا اجراء بھی کیا۔ڈائریکٹر جنرل نورالامین مینگل نے تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ صحت مند پنجاب ویژن کے تحت چودہ اگست سے پنجاب فوڈ اتھارٹی پورے پنجاب میں کام شروع کر دے گی۔ توسیع پروگرام کے تحت پہلے مرحلے میں عملے کی بھرتیوں کا کام مکمل کرلیاگیا ہے۔14اگست سے فوڈ اتھارٹی میں بھرتی ہونے والے عملے کے لوگ مختلف شعبوں میں فرائض انجام دیں گے۔ ڈی جی فوڈ اتھارٹی کا کہنا تھا کہ ملاوٹ مافیا کی نشاندہی کیلئے تمام افسران اپنے فرائض تندہی سے سرانجام دے کر اپنا انتخاب درست ثابت کریں۔ نورالامین مینگل کا کہنا تھا کہ تعلیمی اداروں کی حدوداوراطراف میں غیرمعیاری کولڈ ڈرنکس فروخت کرنیوالوں کی دکانیں سیل اوردس لاکھ روپے تک جرمانہ کیا جائے گا، پھل اور سبزی فروشوں کو لائسنس کے ساتھ ٹریننگ بھی دی جائے گی۔ غیرمعیاری کولڈ ڈرنکس کی فروخت کے خلاف کریک ڈاؤن کا آغاز 14 اگست سے کیا جائے گاجس کے لئے سات سو سے زائد ٹیمیں تشکیل دی گئی ہیں۔ پھل اورسبزی فروشوں کو لائسنس کا پابند بنانے کا مقصد پیسے کمانا یا صرف فیس حاصل کرنا نہیں ہے بلکہ پھل، سبزی فروشوں کی ڈویلپمنٹ ہے تاکہ ان کو حفظان صحت کے اصولوں سے آگاہ کیا جا سکے، لائسنس کی مدد سے ہمارے پاس ڈیٹا موجود ہو گا کہ کتنے لوگ اس پیشے سے وابستہ ہیں اور ان کی ٹریننگ بھی کرائی جائے گی۔

پنجاب فوڈ اتھارٹی

مزید : صفحہ اول