ضلع ناظم پشاور کے زیر صدارت اجلاس ،بی سی اے ریکارڈ کو کمپیوٹرائزڈ کرنے کا فیصلہ

ضلع ناظم پشاور کے زیر صدارت اجلاس ،بی سی اے ریکارڈ کو کمپیوٹرائزڈ کرنے کا ...

  



پشاور( کرائمز رپورٹر)ضلع ناظم پشاورمحمدعاصم خان کی زیر صدارت اجلاس‘ چاروں ٹاؤنز کے بی سی اے ریکارڈ کوکمپیوٹرائزڈ کرنے کا فیصلہ‘ ٹاؤن ون میں قواعد وضوابط پورے ہونے پر 13 نقشوں کی منظوری جبکہ 4نقشوں کوقواعد وضوابط پورے نہ ہونے پر منسوخ کردیا گیا ‘نقشوں کے برعکس تعمیرات مسمار کرنے کا فیصلہ‘ تفصیلات کے مطابق ضلع ناظم پشاورمحمدعاصم خان کی زیر صدارت ٹاؤن ون بی سی اے کا اجلاس منعقد ہواجس میں ناظم ٹاؤ ن ون زاہد ندیم ‘ ڈائریکٹر کوارڈینیشن صاحبزادہ محمد طارق ‘ ٹی ایم او ٹاؤن ون احسان اللہ ‘ ایکسین رشید اللہ‘ آئی ٹی انچارج شہاب احمد‘ بی سی اے کمیٹی کے چیئرمین وڈسٹرکٹ ممبر آصف خان‘ ڈسٹرکٹ ممبرزاہد ممند ‘ ڈسٹرکٹ ممبر مجاہد خان ‘ پی ایس او نصر ت اللہ ‘ ایس ڈی اوٹاؤن ون اوردیگر بی سی اے سٹاف نے شرکت کی ۔اجلاس میں فیصلہ کیا گیاکہ عوام کی سہولت کیلئے اور بی سی اے سٹاف کی کارکردگی بہتر بنانے ‘ شفافیت برقرار رکھنے اورعوام کو قواعد وضوابط پورے ہونے کے بعد جلد سے جلد نقشوں کی فراہمی کیلئے بی سی اے کے تمام ریکارڈ کو کمپیوٹرائزڈ کیاجائیگا جس کیلئے ایکسین بی سی اے کو دو ہفتوں کے اندر تمام ریکارڈ آئی ٹی انچارج کومہیا کرنے کیلئے احکامات جاری کردئیے ‘ اجلاس میں فیصلے کئے گئے کہ تمام بلڈنگ انسپکٹرز روزانہ کی بنیاد پر اپنے علاقوں میں موجودگی کو یقینی بنائے اور نقشوں کے برعکس تعمیرات کی فوری مسمار ی کیلئے بی سی اے کو اطلاع کرنے کی ہدایت کی گئی اجلاس میں فیصلے کئے گئے کہ نقشوں کی منظوری سے قبل تعمیرات پر کام شروع ہونے کی صورت میں فوری طور پر تعمیرات بندکرنے اور بھاری جرمانہ عائد کرنے کے احکامات دئیے گئے اجلاس میں فیصلے کئے گئے کہ بی سی اے ریکارڈ کو کمپیوٹرائزڈکرنے کے بعد عوام کو کمپیوٹرائزڈ رسید جاری کی جائیگی اور تمام عمل کو شفاف بنایاجائیگا ضلع ناظم نے تمام بی سی اے سٹاف کو تنبیہ کی کہ غیر ذمہ داری کا مظاہرہ کرنے والے اہلکاروں کے خلاف سخت سے سخت کارروائی کی جائیگی۔ اجلاکے آخر میں بی سی اے ٹاؤن ون کو موصول ہونے والے 17 نقشو ں میں 13 کوقواعد وضوابط پورے ہونے پر منظور کرلیا گیا جبکہ 4 نقشوں کوقواعدوضوابط پورے نہ ہونے پر منسوخ کردیا اس کے علاوہ تعمیراتی کام کے دوران سڑک پر ملبہ گرانے والوں کے خلاف بھی سخت کارروائی کا فیصلہ کیا گیا ۔

مزید : پشاورصفحہ آخر


loading...