کوئٹہ دہشت گردی واقعہ کا ایک سال مکمل ہونے پرملک بھر کے وکلاءنے یوم سوگ منایا

کوئٹہ دہشت گردی واقعہ کا ایک سال مکمل ہونے پرملک بھر کے وکلاءنے یوم سوگ منایا

  



لاہور(نامہ نگارخصوصی)کوئٹہ دہشت گردی واقعہ کا ایک سال مکمل ہونے پرلاہور ہائیکورٹ بار نے بھی ملک بھر کے وکلاءکی طرح یوم سوگ منایا،وکلاءعہدیداروں کا کہنا ہے کہ دہشت گردوں نے وکلاءپر نہیں بلکہ پاکستان اور عدالتی نظام پر حملہ کیا، گھبرانے والے نہیں ،ریاست دہشت گردوں کا قلع قمع کرے۔

لاہور ہائیکورٹ نے کمشنر ان لینڈ ریونیو کو نجی کمپنیوں کا آڈٹ کرنے سے روک دیا

لاہور ہائی کورٹ بار نے مطالبہ کیا کہ شہید وکلاءکے لواحقین کو سرکاری افسران جو شہید ہو جاتے ہیں کے برابر مراعات دی جائیں۔کوئٹہ دہشت گردی واقعہ کا ایک سال مکمل ہونے پرلاہور کے وکلاءنے ہڑتال بھی کی ،سانحہ کے خلاف لاہور ہائیکورٹ بار میں وکلاءکا مذمتی اجلاس منعقد ہوا۔اجلاس میں راشد جاوید لودھی قائم مقام صدر لاہور ہائیکورٹ بار ایسوسی ایشن نے شہدائے کوئٹہ کو خراجِ عقیدت پیش کرتے ہوئے کہا کہ زندہ قومیں اپنے شہداءکی قربانیوں کو کبھی فراموش نہیں کرتیں اور اپنے شہید وکلاءبھائیوں ,شہریوں کی یاد میں کوئٹہ میں ایک بہت بڑا اجتماع منعقد کیا جا رہا ہے اور دیگر بار ایسوسی ایشنز میں بھی شہداءکی یاد میں تعزیتی اجلاس ہو رہے ہیں۔ انہوں نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ شہداءکے لواحقین کو سرکاری افسران جو شہید ہو جاتے ہیں کے برابر مراعات دی جائیں۔دیگروکلاءنے خطاب کرتے ہوئے ایک سال قبل کوئٹہ کچہری میں وکلاءپر ہونے والی دہشت گردی کی کاروائی کی شدید الفاظ میں مذمت کی، وکلاءعہدیداروں نے کہا کہ کوئٹہ واقعہ کے بعد دہشت گردی کے خاتمے کے حکومتی د عوے بے بنیاد ثابت ہو چکے ہیں اگر حکومت امن و امان کو کنٹرول نہیں کر سکتی تو حکمران گھر چلے جائیں۔انہوں نے کہا کہ ملک سے دہشت گردی کے خاتمے کے لئے قوم سیسہ پلائی دیوار ہے حکومت نیشنل ایکشن پلان پر عمل درآمد کو یقینی بنائے تاکہ دہشت گردی سے نمٹا جا سکے۔

مزید : لاہور


loading...