محسن وال ‘ ڈاکٹر کی لاپروائی ‘ مریض جاں بحق ‘ ورثا کا احتجاج

محسن وال ‘ ڈاکٹر کی لاپروائی ‘ مریض جاں بحق ‘ ورثا کا احتجاج

محسن وال( نمائندہ پاکستان )پرائیویٹ ڈاکٹر کی غفلت سے مریض جان کی بازی ہا ر گیا،تفصیلات کے مطابق میاں چنوں کے علاقہ121سوین ای آر کے رہائشیوں بلال احمد،ضیاء الرحمن پسران قاری عبدالطیف مرحوم نے دیگر اہلیان اعلاقہ کے ہمراہ احتجاج کرتے ہوئے بتایا کہ ہمارے والد(بقیہ نمبر45صفحہ12پر )

مرحوم قاری عبدالطیف کو معدے کا مسئلہ بنا ،جس پر ہم اپنے والد کو میاں چنوں کی نواب کالونی میں پرائیویٹ ڈاکٹرمشتاق کے کلینک پر لے آئے،جہاں پر مرےض کو ڈاکٹر مشتاق نے چےک اپ کر نے کے بعد کہا کے مر ےض مےں خون کی کمی ہے ان کو خون لگو ائےں جس کا ہم نے فور ی طور پر بند و بست کےا اور مر ےض کو کلےنک پر مو جود ڈسپنسر فلک شےر نے خون لگا دےا،اور کہا کہ مرےض کو کچھ دن علاج کے لئے ہسپتال مےں ہی داخل کر وا دوجس پر ہم نے مریض کو ہسپتال میں داخل کروادیا، اےک دن سا ئل ضر وری کام کے لئے گھر گےا والدہ ہسپتال مےں موجود تھےں اور کچھ دیر بعد نماز پڑھنے گئےں تو ان کی غےر موجودگی مےں مر ےض کے مثانے مےں گہرا زخم کر دےا، زخم کرنے سے پہلے ہماری کو ئی اجازت نہ لی گئی نہ ہی اطلاع دی گئی،نہ ہی کوئی کاغذی کاروائی کرکے ہم سے دستخظ لئے گئے،ہمارے بار بار پوچھنے پر بھی ہ میں دھوکہ میں رکھا گیا اور کوئی بات صیح نہیں بتائی گئی،اور دوسری طرف زخمی روز بروز شدید خراب ہورہا تھا ، سائل کی والد ہ نے ڈاکٹر کی منت سما جت کی کے مر ےض کا زخم ٹھےک کےا جا ئے،اس پر ڈاکٹر اور عملے نے مزید بد تمےزی کرنے لگ گےا ،ہسپتال عملہ نے والدہ کے ساتھ بد تمےزی لڑا ئی جھگڑ ا شر وع کر دےا ،دھمکےاں دےنے لگے کے آپ سے جو ہو تا ہے کر لو،جب ہم نے اپنے والد کی مےڈےکل رپورٹ کا مطالبہ کےا ہمےں وہ بھی نہ دی گئی،او ر کلےنک سے باہر نکال دےا ،ہم مجبور ہو کر شےخ زےد ہسپتال لا ہور لے گئے انہوں نے مرےض کو جواب دے دیا ،اور زخم مزید گہرا ہوتا گیا، پھر ہم مر ےض کو سر وسز ہسپتال لے گئے وہاں ڈاکٹرز نے مریض کی حالت دیکھ جواب دے دیا،سائلین نے بتایا کہ ہمارے والد کی موت کا ذمہ دار ڈاکٹر مشتاق ہے جس نے غفلت اور لاپرواہی کرکے ہمارے باپ کو موت کے منہ میں اُتارا ،ہم نے ڈاکٹرز کے خلاف اعلیٰ افسران اور پولیس کو کاروائی کیلئے درخواست دے دی ہے،ہماری اعلیٰ حکام سے گزارش ہے ہ میں انصاف فراہم کیا جائے ۔

لاپروائی

مزید : ملتان صفحہ آخر


loading...