بزنس مین پینل نے بھی بھارت کے ساتھ تجارت ختم کرنے کی حمایت کر دی

بزنس مین پینل نے بھی بھارت کے ساتھ تجارت ختم کرنے کی حمایت کر دی
بزنس مین پینل نے بھی بھارت کے ساتھ تجارت ختم کرنے کی حمایت کر دی

  


لاہور(ڈیلی پاکستان آن لائن)چیئرمین بزنس مین پینل میاں انجم نثار نے  نیشنل سکیورٹی کونسل کی میٹنگ میں کیے گئے حکومتی فیصلے کی تائید کرتے ہوئے کہا کہ حکومت پاکستان نے کشمیر کے ایشو پر بھارت کے ساتھ تجارت کو معطل کر کے درست سمت قدم اٹھایا ہے اور قومی امنگوں کی بھرپور ترجمانی کی ہے ،بھارت نے کشمیر کی خود مختاری کے قانون پر شب خون مارا اور اپنے میں ضم کر لیا۔ پاکستان کی بزنس کمیونٹی کبھی بھی اس غیر قانونی اقدام کو تسلیم نہیں کرے گی ،بھارت کے ساتھ تجارت معطل ہونے سے سب سے زیادہ نقصان غیر ملکی سرمایہ کاری کی مد میں سالانہ64 ارب ڈالر وصول کرنے والے ملک بھارت کو پہنچے گا،بھارت اوچھے ہتھکنڈوں سے مقبوضہ کشمیر کو فلسطین نہیں بنا سکتااور نہ ہی مسلم اکثریت کو اقلیت میں بدل سکے گا،بھارت کشمیر کو ہمیشہ اپنا اندرونی معاملہ قرار دیتا رہا ہے جبکہ یہ ایک بین الاقوامی معاملہ ہے ورنہ امریکی صدر اس پر وزیر اعظم عمران خان سے بات کرتے نہ ثالثی کی پیشکش کرتے۔

میاں انجم نثار نےکہابھارت کی ظالم نسل پرست حکومت کےعزائم اور انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کو بے نقاب کرنے کے لئے تمام سفارتی چینلز بروئے کا ر لائے جائیں، بھارت کو مظبوط پیغام بھیجنا وقت کی اہم ضرورت تھی ۔میاں انجم نثار نے کہا  کہ پاکستان کو بھارت سے تجارت میں خسارہ اٹھانا پڑ رہا تھا، گزشتہ مالی سال  باہمی تجارت میں پاکستان کو  ایک ارب اٹھائیس کروڑ سولہ لاکک ڈالر کے تجارتی خسارے کا سامنا ہے، ملک کی بزنس کمیونٹی کسبی بھی قسم کی بھارتی جارحیت اور بیرونی خطرے کے خلاف انکے شانہ بشانہ کھڑی ہے ۔ انھوں نے عالمی برادری سے مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ وہ بھارت کو  بھارت کو انسانی حقوق کے چارٹر کا احترام کرنے پر مجبور کرے، انڈیا کسی خوس فہمی میں نہ رہے کہ وہ کشمیر پر قبضہ کر لے گا ، نیشنل سکیورٹی کونسل اس سلسلے میں بھارت کے خلاف مزید سخت فیصلے کرے۔ میاں انجم نثار نے چین کی حکومت سے بھی مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ وہ بھی بھارت کے ساتھ تجارتی سرگرمیوں کو معطل کرے تاکہ خطے میں بھارتی دہشت گردی اور چودھراہٹ کو ختم کیا جائے، مسلم امہ کو بھی اس ایشو پر متحد ہونے کی ضرورت دے ، او آئی سی اس ایشوپر اجلاس بلائے اور اپنا مثبت کردار ادا کرے،صرف بیان بازی سے کام نہیں چلے گا عملی طور پر اقدامات اٹھانا ہونگے 

مزید : بزنس