پاکستان کی حکومت شملہ معاہدہ اٹھاکر بھارت کے منہ پر مارے ،کشمیر کا حتمی حل جہاد ہی ہے:سراج الحق

پاکستان کی حکومت شملہ معاہدہ اٹھاکر بھارت کے منہ پر مارے ،کشمیر کا حتمی حل ...
پاکستان کی حکومت شملہ معاہدہ اٹھاکر بھارت کے منہ پر مارے ،کشمیر کا حتمی حل جہاد ہی ہے:سراج الحق

  


مظفرآباد(ڈیلی پاکستان آن لائن)جماعت اسلامی پاکستان کے  امیر سینیٹر سراج الحق نے کہا ہے کہ کشمیر کا حتمی حل جہاد ہی ہے،بھارت نے دفعہ 370 کو چھیڑ کر ایک نئی جنگ چھیڑ دی ہے،کشمیریوں کے ساتھ کھڑے ہیں کیونکہ کشمیری پاکستان کی جنگ لڑرہے ہیں،اگر کشمیری ناکام ہوگئے تو پاکستان پانی کے ایک ایک قطرے کو ترسے گا۔

مظفرآباد میں وزیراعظم آزادکشمیر راجہ محمد فاروق حیدر خان کے ہمراہ مشترکہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے سراج الحق نے کہا کہ کل جمعہ کےروز بھارتی اقدام کے خلاف جماعت اسلامی کے زیر اہتمام آبپارہ سے انڈین سفارتخانے تک کشمیر بچاؤ مارچ کریں گے،حکومت پاکستان نے جن اقدامات کا اعلان کیا ہے ہم اس کی مکمل تائید اور حمایت کا اعلان کرتے ہیں مگر یہ اقدامات کم ہیں مزید سخت اقدامات کرنے کی ضرورت ہے،پاکستان کی حکومت شملہ معاہدہ اٹھاکر بھارت کے منہ پر مارے ، مظفرآباد میں کشمیریوں سے اظہاریکجہتی کے لیے آیا ہوں،وزیراعظم راجہ فاروق حیدر صرف آزادکشمیر کے ہی نہیں بلکہ یہ مقبوضہ جموں وکشمیر ،لداخ،کارگل سمیت پوری ریاست جموں وکشمیر کے وزیراعظم ہیں،ہم انہیں یقین دلاتے ہیں کہ پاکستان کا بچہ بچہ اور جماعت اسلامی آپ کے ساتھ ہے،ہم نے جوائنٹ سیشن میں قومی وحدت کا مطالبہ کیا ہے حکومت پاکستان پر بھاری ذمہ داری عائد ہوتی ہے کہ وہ قومی وحدت کے لیے کردار اداکرے،اپوزیشن اور دیگر جماعتوں کا بھی فرض ہے کہ وہ اس نازک وقت میں صرف کشمیر کی بات کریں،میں نے تجویز دی ہے کہ وزیراعظم آزادکشمیر کی قیادت میں اعلیٰ سطحی وفد بناکر دنیا بھر میں بھیجا جائے جب تک کشمیریوں کو رول نہیں دیں گے تحریک آزادی کشمیر میں جان نہیں پڑے گی۔

سراج الحق نے کہا کہ میرا تعلق دیر سے ہے جو غیرت مند خطہ ہے اور ہزاروں افراد نے تحریک آزادی کشمیر کی خاطر وہاں سے آکر قربانیاں دیں،کوئی ایسا خاندان نہیں جس میں کوئی شہید نہ ہو۔امیر جماعت اسلامی نے کہا کہ اقوام متحدہ کی قراردادوں سے اگر مسئلہ کشمیر حل ہوجاتا تو یہ بہت اچھی بات تھی مگر بھارت نے اکتہر سال سے 23منظور شدہ قراردادوں پر کوئی عملدرآمد نہیں کیا اس لیے میں سمجھتا ہوں کہ بھارت کے منفی عزائم اور جارحیت کا علاج صرف جہاد سے ہی ممکن ہے۔بھارت سے تجارت ختم کرنے کے اقدام کی حمایت کرتا ہوں۔سراج الحق نے کہا کہ اس وقت مقبوضہ کشمیر میں سید علی گیلانی،میرواعظ عمر فاروق،سید شبیر شاہ،آسیہ اندرابی،محمد یاسین ملک سمیت پوری قیادت متحد اور منظم ہے بلکہ ماضی میں بھارت کے ہمنوا کشمیری راہنما محبوبہ مفتی اور عمر عبداللہ بھی حریت کانفرنس کے موقف کے ساتھ کھڑے ہیں یہ کشمیریوں کی فتح ہے،مودی کے جابرانہ فیصلے سے ہندوستان کے اندر کئی تحریکوں کو موقع ملے گا اور یہ ہندوستان کے لیے برا ثابت ہوگا،خود راجیہ سبھا میں مودی کے اس فیصلے کی مخالفت کی گئی ہے اور بڑی جماعتیں سپریم کورٹ چلی گئی ہیں،کشمیری خود کو تنہا نہ سمجھیں اور نہ کمزور سمجھیں ہم آپ کے ساتھ ہیںاب ضرورت اس امر کی ہے کہ ماضی کے حکمرانوں کی موجودگی میں بھارت نے کنٹرول لائن پر جو باڑ لگائی تھی اسے توڑنے کی ضرورت ہے،میرا ایمان ہے کہ جنوبی سوڈان اور مشرقی تیمور آزاد ہوسکتا ہے ،افغانستان کے عوام تین سپر پاور کو شکست دے کر آزادی حاصل کرسکتے ہیں تو کشمیریوں کو بھی جلد آزادی ملے گی،سفارتی تعلقات بھی مکمل منقطع کرنے چاہئیں۔

انہوں نے کہا کہ بھارت ہمیں آر ایس ایس سے نہ ڈرائے ہم احمد شاہ ابدالی،محمود خان غزنوی اور غوری کے وارث ہیں بھارت کو سومنات یاد رکھنا چاہیے۔اس موقع پر وزیراعظم آزادکشمیر نے کہا کہ سینیٹر سراج الحق کا شکریہ ادا کرتے ہیں کہ وہ کشمیریوں سے اظہار یکجہتی کے لیے مظفرآباد آئے۔قومی اسمبلی اور سینٹ  کے مشترکہ اجلاس میں اہل پاکستان نے جس طرح کشمیریوں کی حمایت کی اس کی مثال نہیں ملتی۔حکومت پاکستان کے حالیہ اقدامات نہایت خوش آئند ہیں،بھارت کشمیر میں انسانیت سوز مظالم ڈھارہا ہے اور دنیا خاموش ہے،سفارتی سطح پر مسئلہ کشمیر کے حل کے لیے کوششوں کو تیز کیا جانا چاہیے۔انہوں نے کہا کہ سراج الحق غیرت مند صوبہ کے پی کے سے تعلق رکھتے ہیں اور دیر کے عوام کی مجاہدانہ کہانیاں میرے والد مرحوم مجھے سنایا کرتے تھے۔سراج الحق کی باتیں سن کر آج مجھے قاضی حسین احمد یاد آگئے۔اہل کشمیر تکمیل پاکستان کی جنگ لڑرہے ہیں اور ان شاء اللہ ہمیں اس میں کامیابی حاصل ہوگی۔اس موقع پر وزیر اطلاعات وسیاحت آزادکشمیر مشتاق منہاس،امیر جماعت اسلامی آزادکشمیر ڈاکٹر خالد محمود،سابق امیر اور چیئرمین پبلک اکاؤنٹس کمیٹی عبدالرشید ترابی ودیگر راہنما بھی موجود تھے۔

مزید : قومی /علاقائی /آزاد کشمیر /مظفرآباد


loading...