پاکستان کے نئے نقشے کا اجرا حقیقت اور دو قومی نظریہ کی عکاسی 

  پاکستان کے نئے نقشے کا اجرا حقیقت اور دو قومی نظریہ کی عکاسی 

  

  سرینگر (این این آئی)بھارت کے غیر قانونی زیر تسلط جموں وکشمیر میں کل جماعتی حریت کانفرنس کے جنرل سیکریٹری مولوی بشیر احمدنے پاکستان کی طرف سے منظور کئے گئے نئے نقشے کا خیرمقدم کیا ہے جس میں مقبوضہ جموں وکشمیر کو پاکستان کا حصہ دکھایاگیا ہے۔ کشمیرمیڈیاسروس کے مطابق حریت کانفرنس کے جنرل سیکریٹری مولوی بشیر احمدنے سرینگر میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہاکہ پاکستان کے نئے نقشے سے دو قومی نظریہ کی عکاسی اور حقیقت کا اظہار ہوتا ہے۔ انہوں نے کہاکہ تنازعہ جموں وکشمیر ایک تاریخی حقیقت ہے اور وہ پاکستان کا حصہ ہے۔ مولوی بشیر احمد نے قائد تحریک سید علی گیلانی کو حکومت پاکستان کی طرف سے نشان پاکستان کا اعزا ز دینے کا خیرمقدم کیا اور کہا کہ سیدعلی گیلانی کشمیریوں کی دل کی دھڑکن اور آزادی تحریک کی آواز ہیں۔ حکومت پاکستان کی طرف سے کشمیر ہائی وے کو سرینگر ہائی وے کے نام سے منسوب کرنا ایک اچھا اقدام اس سے مسئلہ کشمیر عالمی سطح پر اجاگر ہو گا۔انہوں نے کہاکہ پاکستان کی حکومت اور عوام کشمیریوں کی اپنے ناقابل تنسیخ حق، حق خود ارادیت کے حصول کی منصفانہ جدوجہد کی سیاسی، سفارتی اور اخلاقی حمایت جاری رکھے ہوئے ہے۔دریں اثناغیر قانونی طور پر بھارت کے زیر قبضہ جموں وکشمیر میں سابق بھارتی وزیر منوج سنہا نے گزشتہ روز جموں وکشمیر کے نئے لیفٹیننٹ گورنر کے عہدے کا حلف اٹھالیا۔کشمیرمیڈیاسروس کے مطابق منوج سنہا سے جموں وکشمیر کے چیف جسٹس گیتا متل نے سرینگر میں نئے لیفٹیننٹ گورنر کے عہدے کا حلف لیا۔واضح رہے کہ سابق آئی اے ایس افسر گریش چندرا مرمو5 اگست کو لیفٹیننٹ گورنرکے عہدے سے مستعفی ہو گئے تھے۔ 

خیر مقدم

مزید :

صفحہ اول -