صرافہ ایسوسی ایشن کا جاری نوٹسز کیخلاف بھوک ہڑتالی کیمپ

  صرافہ ایسوسی ایشن کا جاری نوٹسز کیخلاف بھوک ہڑتالی کیمپ

  

پشاور(سٹی رپورٹر) صرافہ ایسوسی ایشن نے حکومت کی جانب سے مسجد مہابت خان کی عمارت میں 47 دکانوں کو خالی کرنے کے نوٹس کے خلاف بھوک ہڑتال کیمپ لگایا جس کی قیادت صدر شیر فرزند‘ جنرل سیکرٹری حاجی بختیار‘ سینئر نائب صدر حاجی عابد علی‘ حارث خان‘ حمید اللہ‘ ظاہر شاہ‘ ملک نعمان اور دیگر کر رہے تھے۔ کیمپ کے شرکاء نے ہاتھوں میں پلے کارڈز اور بینرز اٹھا رکھے تھے جس پر حکومت کی جانب سے نوٹسز جاری کرنے کیخلاف نعرے درج تھے۔ اس موقع پر جماعت اسلامی سے میئر شپ کے امیدوار بحر اللہ ایڈووکیٹ‘ عوامی نیشنل پارٹی سے میئر شپ کے امیدوار حاجی شیر رحمان‘ ملک مہر الٰہی‘ شرافت علی مبارک‘ خالد گل مہمند‘ عابد اللہ یوسفزئی اور خالد محمود سمیت دیگر بازاروں کے صدور اور مختلف مکتبہ فکر کے لوگوں نے بھی کیمپ کا دورہ کیا۔ اس موقع پر صدر حاجی شیر فرزند نے کہا کہ ڈائریکٹر آرکیالوجی ڈیپارٹمنٹ عبد الصمد کی جانب سے ملنے والے نوٹسز کو مسترد کرتے ہیں کیونکہ یہ دکانیں 50 سال سے مذکورہ دکانوں کے مالکان کے زیر استعمال ہیں جو 47 دکانوں نہیں بلکہ 47 خاندانوں کا مسئلہ ہے۔ مذکورہ محکمے کی جانب سے دکانداروں کو قبضہ مافیا کہنا افسوسناک ہے جس کی جتنی بھی مذمت کی جائے کم ہے۔ انہوں نے مطالبہ کیا کہ مذکورہ دکانداروں کو جاری کئے جانے والے نوٹسز فوری طور پرواپس لئے جائیں بصورت دیگر احتجاج کا دائرہ وسیع کرنے پر مجبور ہو جائیں گے۔ 

مزید :

پشاورصفحہ آخر -