سرکاری میڈیکل کالجز،فیسوں میں اضافہ طلبہ پریشان

  سرکاری میڈیکل کالجز،فیسوں میں اضافہ طلبہ پریشان

  

پشاور(سٹی رپورٹر)سرکاری میڈیکل کالجز کے فیسوں میں سو فیصد اضافے غریب طلبہ پر میڈیکل تعلیم حاصل کرنے کے دروازے بند کرنے کے مترادف ہے جس کو اسلامی جمعیت طلبہ مسترد کرتی ہے۔گزشتہ روز پشاور پریس کلب میں ناظم اسلامی جمعیت طلبہ صوبہ خیبرپختونخوا کلیم اللہ نے   جنرل سیکرٹری اسلامی جمعیت طلبہ صوبہ خیبرپختونخوا اعجازالحق سورانی، ناظم پشاور یونیورسٹی کیمپس شفیق الرحمان، ناظم پشاور شہر محمد کاشف حسن زیب اور  ناظم پشاور ڈویژن وقارکے ہمراہ  پشاور پریس کلب میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ تعلیمی ایمرجنسی نافذکرنے کی بجائے صوبائی حکومت نے تعلیم کو ایمرجنسی میں پہنچادیا ہے۔انہوں نے کہا کہ جامعات کو مالی بحران سے دوچار کرنے کے بعد صوبائی حکومت میڈیکل کالجز میں تعلیم کو غریب کی دسترس سے دور رکھنے پر تلی ہوئی ہے۔حال ہی میں میڈیکل کالجز کی فیسوں میں سو فیصد اضافہ غریب طلبہ پر تعلیم کے دروازے بند کرنے کے مترادف ہے۔ اسلامی جمعیت طلبہ فیسوں میں اضافہ کے اس اقدام کو مسترد کرتی ہے اور اس کے خلاف بھرپور احتجاجی تحریک چلانے کا فیصلہ کرتی ہے جس کے پہلے مرحلے میں جمعرات کے روز صوبہ بھر کے ضلعی ہیڈکوارٹرز میں احتجاجی مظاہرے ہوں گے۔ صوبائی ناظم نے مزید کہا کہ فیسوں میں اضافہ کے خلاف ہر فورم پر آواز اٹھائیں گے اور اس کے لئے جمعیت نے ایک کمیٹی تشکیل دی ہے جوکہ حکومتی ذمہ داران اور اسمبلی کے ممبران سے ملاقات کریگی اور طلبہ کے مطالبات ان تک پہنچائیں گے۔انہوں نے  مطالبہ کیا کہ سرکاری میڈیکل کالجز کے فیسوں میں اضافہ واپس لیا جائے بصورت دیگر  گورنر ہاؤس، صوبائی اسمبلی و خیبر میڈیکل یونیورسٹی کے گھیراؤ سے دریغ نہیں کرینگے۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -