ساس کو جلا کر قتل کرنے والے مجرم  کی عمرقید کے خلاف اپیل مسترد 

 ساس کو جلا کر قتل کرنے والے مجرم  کی عمرقید کے خلاف اپیل مسترد 

  

لاہور(نامہ نگار)لاہورہائی کورٹ کے مسٹرجسٹس شہرام سرور چودھری نے طلاق کرانے کے شبہ میں ساس کو جلا کر قتل کرنے والے مجرم مطلوب حسین کی عمرقید کے خلاف اپیل مسترد کردی،فاضل جج نے قراردیا کہ اس کیس میں کیوں نہ عمر قید کوسزائے موت میں تبدیل کردیا جائے مجرم کاپیٹرول لاکرساس کو جلانا ثابت ہے،فیصلے میں ٹرائل عدالت نے سزائے موت کیوں نہیں دی؟جبکہ فاضل جج نے قتل کے ایک مقدمہ میں عمر قید کے قیدی اکرم کی اپیل منظورکرتے ہوئے ناکافی گواہوں اور ثبوتوں کی بناء پربری کردیا اپیل پر سماعت شروع ہوئی تو مجرم کے وکیل نے موقف اختیارکیا کہ وقوعہ سے مجرم کے فنگر پرنٹ نہیں لئے گئے،فاضل جج نے ریمارکس دیئے کہ سگے بیٹوں نے اپنی ماں اور شوہرنے اپنی بیوی کو جلتے ہوئے دیکھا اس سے بڑی گواہی کیا ہوسکتی ہے،گواہان جلنے والی کو بچانے کی کوشش میں خود بھی زخمی ہوئے کیا یہ کافی نہیں،سرکاری وکیل نے عدالت کوبتایا کہ مطلوب حسین نشے اور سماجی برائیوں میں مبتلا تھا،مقتولہ کی بیٹی پندرہ دن قبل خاوندسے طلاق لیکروالدین کے ہمراہ رہ رہی تھی ملزم کو شبہ تھا کہ اس کی بیوی نے اپنی ماں کی ایماء  پرطلاق لی ٹرائل عدالت نے مجرم کو جرم ثابت ہونے پرعمر قید کاحکم سنایا،مجرم کی بریت کی اپیل مسترد کی جائے،مجرم کے خلاف تھانہ صدربھکر پولیس نے قتل کا مقدمہ درج کیا،دریں اثنا عدالت نے

 دوسرے مقدمہ میں ٹرائل عدالت سے نواز نامی شخص کے قتل کے الزام میں ملزم اکرم کی عمرقید کی سزا ء کالعدم قراردیتے ہوئے اسے بری کردیا ملزم کے خلاف تھانہ قلعہ دیدار سنگھ گوجرانوالہ میں مقدمہ درج تھا،ملزم پرادھار رقم واپس مانگنے پرنواز کااپنے ڈیرے پربلاکرقتل کرنے کاالزام تھا۔

اپیل مسترد

مزید :

صفحہ آخر -