سماج دشمن عناصر کیخلاف پولیس کے 9سو سڑائیک اینڈ سرچ آپریشن 

  سماج دشمن عناصر کیخلاف پولیس کے 9سو سڑائیک اینڈ سرچ آپریشن 

  

       پشاور(کرائم رپورٹر)صوبا ئی دار لحکومت پشاور شہر اور ملحقہ علا قو ں میں جرائم پیشہ عناصر، منشیا ت فروشو ں اور دیگر سنگین وارداتو ں میں ملوث ملزمو ں کیخلاف رواں سال کیدوران 2ہزار 900 سر چ اینڈ سڑا ئیک آ پریشن کئے گئے۔ سی سی پی او پشاور کے مطابق پشاور پولیس کی جانب سے امن و امان کی صورتحال کو برقرار رکھنے کی خاطر رواں سال کے دوران 2 ہزار 9 سو آپریشنز کئے گئے ہیں جسمیں پاک آرمی، لیڈیز پولیس، سپیشل کمبیٹ یونٹ، بی ڈی یو، سنیفر ڈاگز ٹیموں نے بھی حصہ لیا، آپریشنز کا مقصد جرائم پیشہ اور سماج دشمن عناصر کو ان کے مذموم مقاصد میں ناکام بنانا تھا جن کے دوران گھروں، ہوٹل و سرائے اور نجی ہاسٹلز سمیت دیگر نجی املاک سے مختلف جرائم میں ملوث 9 ہزار سے زائد افراد کو حراست میں لیا گیا ہے، خصوصی کارروائیوں کے دوران 1133 اشتہاریوں سمیت منشیات کے دھندے میں ملوث 3392 ملزمان کو بھی گرفتار کیا گیا ہے جبکہ 14 ہزار سے زائد مشکوک افراد سے بھی پوچھ گچھ کی گئی ہے، اسی طرح پانچ سو سے زائد افغان مہاجرین سمیت نامکمل کوائف پر 8 ہزار 4 سو سے زائد غیر رجسٹرڈ کرایہ داروں کے خلاف بھی کارروائی عمل میں لائی گئی ہے، خصوصی سرچ اینڈ سٹرائیک آپریشنز کے دوران اشتہاری مجرمان کو پناہ دینے اور ہوائی فائرنگ میں ملوث سینکڑوں افراد کو بھی گرفتار کیا گیا ہے، کارروائیوں کے دوران مجموعی طور پر 2500 سے زائد مختلف قسم کا اسلحہ، 52 کلو گرام آئس، 687 کلو گرام چرس، 43 کلو گرام افیون، 40 کلو گرام ہیروئن اور سینکڑوں بوتل شراب بھی برآمد کی گئی ہے۔ سی سی پی او عباس احسن نے ہیومن انٹیلی جنس کو مزید فعال کرنے اور سرچ اینڈ سٹرائیک آپریشنز کے سلسلہ کو مزید موثر بنانے جبکہ اندرون شہر اور نواحی علاقوں میں یکساں کارروائیوں کی ہدایت کی ہے، سی سی پی او نے سرچ اینڈ سٹرائیک کی اہمیت کو اجاگر کرتے ہوئے واضح کیا ہے کہ رواں سال سرچ اینڈ سٹرائیک آپریشنز کے دوران کریمینل ریکارڈ ویریفیکشن سسٹم کے ذریعے ایک لاکھ سے زائد افراد کا ریکارڈ چیک کیا گیا ہے جن کے دوران پولیس کو مطلوب متعدد انتہائی خطرناک اشتہاریوں کو گرفتار کرنے میں مدد ملی ہے، انہوں نے مزید کہا کہ چاروں ڈویژنل ایس پیز کو خصوصی ٹاسکس حوالہ کئے گئے ہیں جن کی روشنی میں مصدقہ اطلاعات پر کارروائیوں کا سلسلہ اسی طرح جاری رہے گا۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -