آئے روز فائرنگ ، سیشن کورٹ بے آسراء ،وکلاء خوفزدہ

آئے روز فائرنگ ، سیشن کورٹ بے آسراء ،وکلاء خوفزدہ

 لاہور(کامران مغل/عکاسی ذیشان منیر)سیشن کورٹ کے ججز گیٹ سے ملحقہ موٹرسائیکل سٹینڈکے قریب 15سالہ نوجوان کی اندھا دھندھ فائرنگ سے ایک شخص قتل جبکہ دوسرے کے زخمی ہونے کے واقع پرگزشتہ روزوکلاء میں شدیدخوف و ہراس پھیل گیا ،وکلاء پولیس کی جانب سے ناقص سیکیورٹی پربلبلا اٹھے ،وکلاء کا کہنا ہے کہ ناقص سیکیورٹی کے باعث وکلاء جج صاحبان ،عدالتی عملے اور روزانہ عدالت آنے والے سینکڑوں سائلوں کی زندگیاں داؤ پر لگی ہوئی ہیں ۔وکلاء نے حکام بالا سے سیشن کورٹ کے داخلی اور خارجی راستوں پر فول پروف سیکیورٹی فراہم کرنے کا مطالبہ کیا ہے ۔تفصیلات کے مطابق سابق سیکرٹری لاہوربار کامران بشیر مغل ،ممبر پنجاب بار کونسل فرحاد علی شاہ ،پاکستان بار کونسل کے کوارڈینیٹر مدثر چودھری نے کہاکہ گزشتہ روز سیشن کورٹ کے باہر پیش آنے والے المناک واقع سے پولیس کے سیکیورٹی انتظامات کا پول کھل گیا ہے ، انہوں نے مزید کہا کہ ایسے واقعات سے وکلاء میں خوف وہراس پھیلتا ہے اور وہ اپنی زندگیوں کو بھی غیر محفوظ سمجھتے ہیں ،انہوں نے مزید کہا کہ سیکیورٹی پر تعینات پولیس اہلکار اکثر اوقات اپنی ڈیوٹی سرانجام دینے کی بجائے خوش گپیوں میں مصروف رہتے ہیں۔سینئرایڈووکیٹ شعیب چودھری ،مرزاحسیب اسامہ، مجتبی چودھری اور مشفق احمد خان کا کہنا ہے کہ اس سے قبل بھی سیشن کورٹ کے اندر اور باہر قتل کے واقعات رونما ہوچکے ہیں تاہم اس حوالے سے متعدد بار حکام بالا کو سیکیورٹی فول پروف بنانے کی استدعا کی گئی ہے لیکن اس پر مکمل عمل درآمد نہیں ہوسکا ہے جس کے باعث ہر وقت کسی بھی ممکنہ قتل وغارت سمیت دیگر خدشات لاحق رہتے ہیں ۔ تفصیلات کے مطابق سیشن عدالت میں روزانہ ہزاروں کی تعداد میں وکلاء براداری کومقدمات کی سماعت کے لیے پیش ہونا پڑتاہے اور اس موقع پر جیلوں سے لائے گئے ملزمان بھی عدالتوں میں پیش کئے جاتے ہیں تاہم ملزمان سے ملاقات کے لئے ان کے متعدد رشتہ دار بھی سیشن عدالت میں پہنچ جاتے ہیں تاہم اس موقع پر عدالت میں سیکیورٹی انتہائی ناقص ہونے کی وجہ سے ہزاروں وکلاء کے ساتھ ساتھ روزانہ سینکڑوں کی تعداد میں پیشی پرآئے ملزمان اوران کی ملاقات کے لیے آنے والے رشتہ داروں کی زندگیاں داؤ پر لگی رہتی ہیں۔سیشن کورٹ میں آنے والے سائلین فیصل ڈار، نعیم بٹ ، بلال چودھری، ناصر جمال ، علی اکبروغیرہ نے نمائندہ پاکستان سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ پہلے بھی سیشن کورٹ میں قتل وغارت کے واقعات رونما ہوچکے ہیں جو کہ پولیس کی ناقص سیکیورٹی کا منہ بولتا ثبوت ہے ۔

مزید : میٹروپولیٹن 1


loading...