پاکستانی قوم سالانہ 240 ارب خیرات کرنے لگی

پاکستانی قوم سالانہ 240 ارب خیرات کرنے لگی

لاہور (مانیٹرنگ ڈیسک)1998ء سے لے کر 2014ء تک پاکستان میں سالانہ خیرات کی رقم میں 3 گنا اضافہ ہوا ہے اور یہ 70 ارب سے بڑھ کر 240 ارب روپے تک پہنچ چکی ہے۔ برطانوی نشریاتی ادارے بی بی سی میں چھپنے والی رپورٹ کے مطابق پاکستان میں ہر سال ملک کے 98 فیصد گھرانے عطیات، خیرات اور صدقات کی صورت میں اربوں کی یہ رقم دیتے ہیں۔ خیرات کا 68 فیصد براہ راست ضرورت مند رشتہ داروں، معذور افراد اور بھکاریوں کو دیا جاتا ہے۔ رپورٹ کے مطابق پاکستانی افراد مذہبی بنیادوں پر خیرات کرتے ہیں جبکہ انسانی ہمدردی کی بنیاد پر خیرات کا نمبر اس کے بعد آتا ہے۔ رپورٹ کے مطابق قربانی کی کھالوں کی صورت میں ہونے والی خیرات کی مالیت 5 ارب روپے جبکہ مزاروں اور درباروں کو ساڑھے 6 ارب روپے خیرات اور صدقات کی صورت میں ملتے ہیں۔ رپورٹ کے مطابق آبادی کے لحاظ سے پاکستان کے سب سے بڑے صوبے پنجاب میں ہر سالانہ 113 ارب کی خیرات دی جاتی ہے جبکہ سندھ میں 78 ارب، خیبر پختونخوا میں 38 ارب اور بلوچستان میں 10 ارب روپے کی خیرات کی جاتی ہے۔ رپورٹ کے مطابق نجی طور پر دی جانے والی خیرات کا تقریباً 30 فیصد مساجد اور مدرسوں کے حصے میں آتا ہے۔ زکوٰۃ کی مدد میں 25 ارب روپے جبکہ زکوٰۃ کے علاوہ تقریباً 71 ارب روپے دئیے جاتے ہیں۔

خیرات

مزید : صفحہ آخر


loading...