فاٹا کو خیبر پختونخوا میں ضم کرنے تک چھین سے نہیں بیٹھیں گے : اسفندیارولی

فاٹا کو خیبر پختونخوا میں ضم کرنے تک چھین سے نہیں بیٹھیں گے : اسفندیارولی

 پبی ( نما ئندہ پاکستان ) عوامی نیشنل پارٹی کے سربراہ اسفند یار ولی خان نے وفاقی کابینہ کے اجلاس میں فاٹا اصلاحات کو نکالنے پر شدید تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ اے این پی فاٹا کو خیبر پختونخوا میں ضم کیے جانے تک چین سے نہیں بیٹھے گی ۔ فاٹا کے شہریوں کو گزشتہ70 برسوں سے مکمل آئینی حقوق حاصل نہیں۔ پارلیمنٹ میں موجود فاٹا کے منتخب نمائندوں کی تجاویز پر مشتمل حکومتی فاٹا اصلاحات پر عمل درآمد کو اچانک روکنا گہر ی سازش ہے ۔ اسفند یار ولی خان نے مزید کہا کہ حکومت ہوش کے ناخون لے قبائلی عوام آئینی حقوق کی فراہمی میں رکاوٹ نہ بنیں۔ اے این پی فاٹا کے عوام کی طرف سے 12مارچ کو اسلام آباد لانگ مارچ کی نہ صرف مکمل حمایت کرتی ہے بلکہ اے این پی لانگ مارچ میں بھر پور شرکت کرکے قبائلی عوام کے حقوق حاصل ہونے تک کی جدوجہد میں بھی شانہ بشانہ رہے گی۔ انہوں نے مزید کہا کہ بین الاقوامی ایجنڈے کی تکمیل کے لیے قبائلی علاقوں کو دہشت گردوں کی اماجگاہ بنا کر قبائلیوں کو ایندھن بنایا گیا۔ لیکن جب آئینی حقوق کی بات آئی تو تاخیری حربے استعمال کیے جارہے ہیں۔ اسفند یا ر ولی خان نے انتباہ کیا کہ فاٹا کو 2018کے انتخابات سے قبل صوبہ خیبر پختونخوا میں ضم کیاجائے اور فاٹا کی بھی مکمل مردم شماری کی جائے ۔تاکہ آئندہ انتخابات میں فاٹا کے شہریوں کو پارلیمنٹ میں نمائندگی کا حق ملے ۔ انہوں نے کہا کہ حکومت کی دوغلی پالیسی نا انصافی پر مبنی ہے۔

مزید : کراچی صفحہ اول


loading...