جس نے محنت کی وہ فیتہ نہیں کاٹے گا تو اور کیا کرے گا ،بھکھی پاور پلانٹ صرف سوا سال کی مدت میں مکمل ہوا ،وزیر اعظم نواز شریف

جس نے محنت کی وہ فیتہ نہیں کاٹے گا تو اور کیا کرے گا ،بھکھی پاور پلانٹ صرف سوا ...
جس نے محنت کی وہ فیتہ نہیں کاٹے گا تو اور کیا کرے گا ،بھکھی پاور پلانٹ صرف سوا سال کی مدت میں مکمل ہوا ،وزیر اعظم نواز شریف

  


شیخو پورہ (ڈیلی پاکستان آن لائن )وزیراعظم میاں محمد نواز شریف نے نام لیے بغیر عمران خان کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا ہے کہ جو محنت کر رہا ہے وہ فیتہ نہیں کاٹے گا تو اور کیا کر ے گا ،اب برداشت کرو کیونکہ ہم محنت کر رہے ہیں ۔ان کا کہنا ہے کہ ملک میں بجلی کی لوڈ شیڈنگ ختم کرنے کے ساتھ ساتھ عوام کو سستی بجلی فراہم کرنے کے لیے بھی کا م کر رہے ہیں ،ہماری محنت اور ملکی ترقی کے بارے میں دنیا اعتراف کر رہی ہے ۔انہوں نے کہا کہ بھکھی پاور پلانٹ صرف سوا سال کے عرصے میں مکمل ہوا جس سے عوام کو 5روپے 22پیسے فی یونٹ بجلی فراہم ہو گی ۔

اب کوئی بھی آپ کو نامعلوم نمبر سے فون کر کے تنگ نہیں کر سکتا کیونکہ۔۔۔

شیخو پورہ میں بھکھی پاور پلانٹ کا افتتا ح کرنے کے موقع پر وزیراعظم نے کہا کہ بھکھی منصوبہ ریکارڈ مدت میں مکمل ہوا ،منصوبے پر84فیصد فیصد کام ہو چکا ہے ،باقی کچھ عرصے میں مکمل ہو جائے گا ۔انہوں نے کہا کہ جب یہ منصوبہ شروع ہوا تھا تو اس کی قیمت زیادہ تھی لیکن اس منصوبے پر اس سے بھی کم لاگت آئی جس پر تمام انجینئرز اور ٹیم کو مبارکباد دیتا ہوں ۔ان کا کہنا تھا کہ پاکستان اس طرح کے ادوار سے گزرتا رہا ہے کہ جس میں منصوبوں کی لاگت مزید بڑھ گئی ،نیلم جہلم پاور پراجیکٹ جب شروع ہوا تو اس کی لاگت 80بلین روپے تھی لیکن اب اس پر 250بلین روپے لگ چکے ہیں لیکن ابھی تک منصوبہ مکمل نہیں ہو سکا ۔انہوں نے کہا کہ اگر ہم نے بھی ملک کے منصوبوں کے ساتھ ایسا کیا ہوتا تو پھر ملک کا وہ ہی حال ہوتا کہ نہ اس میں گیس ہوتی ،نہ بجلی اور نہ ہی ترقیاتی کام ہوتے ۔

وزیراعظم نے کہا کہ ہم نے لاہور ائیر پورٹ بنا یا تھا لیکن اس کو چھوٹا کردیا گیا جس کا نتیجہ یہ نکلا کہ اب اگر لاہور ائیر پورٹ پر دو فلائٹس آجائیں تو اس میں مزید جگہ نہیں ہوتی لیکن ہم دوبارہ لاہور ائیر پورٹ کے سائزکو بڑا کریں گے ۔ان کا کہنا تھا کہ 2013میں دنیا کہتی تھی کہ پاکستان میں بجلی اورگیس نہیں جبکہ دہشت گردی عروج پر ہیں ،پاکستان کو فیل ریاست کہا جا رہا تھا لیکن آج نیو یارک ٹائمز ،وال سٹریٹ جرنلز ،اکانومسٹ جیسے بڑے بڑے ادارے پاکستان میں ترقی کا اعتراف کر رہے ہیں ۔انہوں نے کہا کہ ہم سب کو ملک کو آگے لے کر جانا ہے ،اس ملک میں ہونے والا اچھا کام سب کے لیے اچھا ہونا چاہیے چاہے وہ حکومت میں ہو یا اپوزیشن میں ۔انہوں نے کہا کہ پچھلے دو ر حکومت میں نہ صرف16,16گھنٹے لوڈ شیڈنگ کا عذاب تھابلکہ بجلی بھی 14سے18روپے فی یونٹ تھی ،ہم نے حکومت سنبھال کر سستی بجلی کی فراہمی کے لیے منصوبے لگائے ،آج بھاشا ہائیڈرو پاورپلانٹ بھی بن رہا ہے جس سے سستی بجلی فراہم ہو گی اور کوئلے کے منصوبے سے بھی سستی بجلی کی فراہمی ممکن ہو سکے گی ۔

مزید : قومی /اہم خبریں


loading...