حکومت 15روز کے اندر سیشن کورٹ کی سیکیورٹی بہتر بنائے ورنہ۔۔۔لاہور بار کے صدر نے الٹی میٹم دے دیا

حکومت 15روز کے اندر سیشن کورٹ کی سیکیورٹی بہتر بنائے ورنہ۔۔۔لاہور بار کے صدر ...
حکومت 15روز کے اندر سیشن کورٹ کی سیکیورٹی بہتر بنائے ورنہ۔۔۔لاہور بار کے صدر نے الٹی میٹم دے دیا

  


لاہور(نامہ نگار)لاہور بار کے صدر چودھری تنویر اختر نے سیشن کورٹ کے باہر واقع کے بعد حکومت کو15روز کے اندر سیکیورٹی بہتر بنانے کا مطالبہ کردیاوگرنہ وکلاءاپنا لائحہ عمل طے کریں گے ۔سیشن کورٹ کے باہر فائرنگ کے واقع کے خلاف لاہور بار کے وکلا نے گزشتہ روزہڑتال کی ،وکلاءعدالتوںمیں پیش نہیں ہوئے جس کے باعث 18ہزار سے زائد مقدمات التواءکا شکار ہوئے جبکہ عدالت آنے والے سائلین کو بھی شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑا۔

پی ایس ایل میچز انٹرنیٹ پر دیکھنے کے خواہشمندوں کو کوئٹہ گلیڈی ایٹرزاور ٹیپ میڈ ٹی وی نے انتہائی شاندار خوشخبری سنا دی ،بہترین سروس متعارف کروا دی

لاہور بار کے صدر چودھری تنویراختر نے گزشتہ روزمشترکہ پریس کانفرنس میں حکومت کو 15روز میں سکیورٹی مزید بہتر کرنے کی وارننگ دے دی ہے۔ایوان عدل میں لاہور بار کے صدر چودھری تنویراخترنائب صدر نوید چغتائی،عرفان صادق تارڑ،سیکرٹری فرحان مصطفی اور ملک فیصل اعوان نے مشترکہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے انتظامیہ کو وارننگ دی کہ 15روز کے اندر اندر ماتحت عدالتوں کی سیکورٹی کو بہتر کردیں ورنہ وکلا اپنا لاءحہ عمل طے کریں گے۔ صدر لاہو ربار نے کہا ہمیں تمام عدالتوں میں واک تھرو گیٹ فراہم کئے جائیں ،عدالتوں میں روزانہ ہزاروں کی تعداد میں وکلا اور سائلین پیش ہوتے ہیں ان کی جانوں کا تحفظ کرنا حکومت اور انتظامیہ کا فرض ہے جس طرح سیشن کورٹ کے باہر فائرنگ ہوئی پولیس اہلکار مسلح موجود تھے لیکن کسی نے ایک فائر بھی نہیں کیا بھگدڑ میں کئی لوگ زخمی ہوئے وکلا نے ہی ہمت کرکے قاتل کو پکڑ کر پولیس کے حوالے کیا۔صدر بار نے مزیدکہا کہ جس طرح لاہور ہائی کورٹ میں سکیورٹی سخت ہے سیشن سول اور دیگر عدالتوں میں بھی سخت کی جائے اگر حکومت نے ہمیں تحفظ فراہم نہ کیا تو وکلا اپنے اجلاس میں لائحہ عمل طے کریں گے۔

مزید : لاہور


loading...