جنیاتی بیماریوں کی روک تھام 145ورچوئل یونیورسٹی میں سمپوزیم

جنیاتی بیماریوں کی روک تھام 145ورچوئل یونیورسٹی میں سمپوزیم

  

لاہور(پ ر)ورچوئل یونیورسٹی آف پاکستان کے زیرِاہتمام جنیاتی بیماریوں کی تشخیص اور روک تھام کے حوالے سے دو روزہ انٹرنیشنل سمپوزیم کا انعقاد ایم اے جناح کیمپس لاہور میں کیا گیا۔ہائر ایجوکیشن کمیشن اور ورچوئل یونیورسٹی کے باہمی اشتراک سے منعقد کیے جانے والی اس بین الاقوامی سمپوزیم کے شرکاء میں ملکی اور بین الاقوامی ماہرِتعلیم اور ماہرین شامل تھے۔اس کانفرنس میں ماہرین نے مختلف بیماریوں ، بچاؤ کی حکمت عملی سمیت مالیکیولر تشخیص کے متعلق موضوعات اورپہلوؤں پر تبادلہ خیال کیا ۔ ۔سمپوزیم میں شرکت کے لیے غیرملکی مندوبین فرانس، روس اور فرانس سے خصوصی طور پرشریک ہوئے ۔اس موقع پرنیشنل انسٹیٹیوٹ بائیو ٹیکنالوجی اینڈ جنیٹک انجینئرنگ کے چیف سائنسدان ڈاکٹر شاہد محمود بیگ مہمانِ خصوصی تھے۔اس موقع پردو تکنیکی سیشنز میں دس تحقیقی موضوعات کو پیش کیا گیاجن میں ماہرین نے جدید جنیاتی ریسرچ،جنیاتی مشاورت برائے جنیاتی امراض،پاکستان میں موجود جنیاتی بیماریاں،بچاؤ کی حکمت عملی اورتشخیص کے نئے رجحانات کے بارے میں تبادلہ خیال کیا اور سفارشات مرتب کیں۔ورچوئل یونیورسٹی کے ریکٹر پروفیسرڈاکٹرمحمد عباس چوہدری نے افتتاحی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے تمام شرکاء کوخوش آمدید کہا اور سمپوزیم کی اہمیت پر روشنی ڈالی۔انہوں نے مزید کہا کہ اس منفرد فورم میں ماہرین کے پیشہ وارانہ تبادلہ خیال سے مرض کی بروقت تشخیص اورعلاج میں مدد ملے گی۔ اس موقع پر ملک بھر کی نامور جامعات سے طلبہ اور اساتذہ کی کثیر تعدادنے شرکت کی ۔

بعد ازاں کانفرنس کے شرکاء، مندوبین اور منتظمین کو یادگاری شیلڈز اور توصیفی اسناد پیش کی گئیں۔

مزید :

علاقائی -