آشیانہ سکینڈل ،شہباز شریف کو عدالت میں پیش کیا جائے ،احتساب عدالت

آشیانہ سکینڈل ،شہباز شریف کو عدالت میں پیش کیا جائے ،احتساب عدالت

  

لاہور(نامہ نگار)احتساب عدالت نے آشیانہ ہاؤسنگ سکینڈل کیس کی سماعت کے دوران نامزد ملزم میاں شہباز شریف کی عدم پیشی پر شدید برہمی کا اظہار کرتے ہوئے انہیں آئندہ تاریخ سماعت پر ہر صورت پیش کرنے کا حکم دے دیا۔عدالت نے واضح کیا کہ آئندہ تاریخ سماعت پر18 فروری کو فرد جرم عائد کی جائے گی۔احتساب عدالت کے جج سید نجم الحسن کے روبروکیس کی سماعت شروع ہوئی تو احد خان چیمہ اور فواد حسن فواد عدالت میں پیش ہوئے تاہم شہباز شریف پبلک اکاؤنٹس کمیٹی کی میٹنگ میں ہونے کی وجہ سے پیش نہیں ہوئے۔عدالت نے استفسار کیا شہباز شریف کیوں پیش نہیں ہوئے؟، ان کو صحت کا مسئلہ ہے یا پی اے سی کی میٹنگ میں ہیں؟ کیس ایسے تو نہیں چل سکتا ،جس پر ڈی ایس پی اعزاز شاہ نے عدالت کو بتایا کہ ان کو صحت کے مسائل بھی ہیں اور میٹنگ بھی ہے جس پرعدالت نے برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہا پولیس تو صرف چوکیدار ہے، ریاست جواب دے کہ شہباز شریف کو کس نے اسلام آباد میں رہنے کی اجازت دی?، انہیں میڈیکل کی اجازت اس لئے نہیں دی کہ وہ عدالت میں پیش ہی نہ ہوں،پراسیکیوٹر نیب نے کہا شہباز شریف کو پیش کرنا نیب کی ذمہ داری نہیں ،پولیس کی ہے جس پر عدالت نے کہا پولیس کیا کرے وہ تو اپنا آپ بچاتی ہے۔شہباز شریف کے وکیل نے کہا ان کے موکل کو ریڑھ کی ہڈی کا مسئلہ ہے اور ڈاکٹروں نے طویل سفر سے منع کیا ہے جس پر عدالت نے کہا کیوں نہ اس ڈاکٹر کو ہی طلب کر کے رپورٹ کے متعلق پوچھا جائے، رپورٹ کے مطابق شہباز شریف ٹھیک تھے، لگتا ہے بستر میں پڑے پڑے بیمار ہوگئے۔فاضل جج نے کہا آج آشیانہ کیس میں فرد جرم عائد ہونی تھی جس پر شہباز شریف کے وکیل نے کہا عدالت کا آج فرد جرم عائد کرنے کا کوئی حکم نہیں تھا۔احتساب عدالت کے جج نے کہا شہباز شریف میٹنگ اٹینڈ کرسکتے ہیں تو عدالت کیوں نہیں آسکتے، اگر ان کی طبیعت خراب ہے تو ایئر ایمبولینس کا انتظام کرلیں گے، آئندہ سماعت پر آشیانہ ہاؤسنگ سکینڈل میں فرد جرم عائد کی جائیگی ، شہباز شریف کو ہر صورت یہاں ہونا چاہیے اور ان کی پیشی پر کوئی عذر قابل قبول نہیں، اگر عدالت نے کوئی فیصلہ دیا تو اچھا نہیں ہوگا، میڈیکل سرٹیفکیٹ دینے والوں کو بھی یہاں لاکھڑا کریں گے، کیس کی مزید سماعت 18 فروری کوہوگی۔

آشیانہ ہاؤسنگ سکینڈل

مزید :

صفحہ اول -