پنجاب پولیس میں 338پولیس افسروں،اہلکاروں کے تبادلے

پنجاب پولیس میں 338پولیس افسروں،اہلکاروں کے تبادلے

  

لاہور (کرائم رپورٹر) پنجاب حکومت نے 6 ڈی ایس پی جبکہ ڈی آئی جی آپریشنز لاہور محمد وقاص نذیر نے332 پولیس افسران وملازمین کی ٹرانسفر پوسٹنگ کے احکامات جاری کر دیئے۔ ڈی ایس پی آرگنائزڈ کرائم وہاڑی سجاد محمد خان اور ڈی ایس پی ٹو بٹالین ون پی سی لاہور شوکت علی جوئیہ کی خدمات ڈی آئی جی ٹریفک پنجاب لاہور کے سپرد ،ایس ڈی پی او تلہ گنگ چکوال عبد الرحمان کو ایس ڈی پی او کلور کوٹ بھکر،ڈی ایس پی آرگنائزڈ کرائم شیخوپورہ جمیل احمد کو ایس ڈی پی او صدر نارووال،ڈی ایس پی ہیڈ کوارٹرز پاکپتن محمد نعیم ورک کو ڈی ایس پی آرگنائزڈ کرائم شیخوپورہ جبکہ ایس ڈی پی او چونیاں قصور سید مستحسن علی شاہ کی خدمات ایڈیشنل آئی جی سپیشل برانچ، لاہورکے سپرد کر دی گئی ٹرانسفر ہونے والوں میں 02سب انسپکٹر ز،28اے ایس آئیز،63 ہیڈ کانسٹیبلز،234 کانسٹیبلزاور 05 لیڈی کانسٹیبلز شامل ہیں۔ ترجمان لاہور پولیس کے مطابق یہ ٹرانسفر پوسٹنگزاردل روم میں پولیس ملازمین کی ذاتی شنوائی کے بعدطے شدہ پالیسی کے تحت عمل میں لائی گئیں۔تفصیلات کے مطابق پولیس ملازمین ہفتہ کے روز اردل روم میں ڈی آئی جی آپریشنز محمد وقاص نذیر کے روبرو پیش ہوئے تھے۔ اردل روم کے چار روز بعدگزشتہ روز ٹرانسفرپوسٹنگ آرڈرز جاری کر دیئے گئے۔ ڈی آئی جی آپریشنز لاہور محمد وقاص نذیر نے کہا ہے کہ اردل روم میں ذاتی شنوائی کا مقصد ٹرانسفر پوسٹنگ کیلئے سفارش کلچر کی حوصلہ شکنی ہے جس کے مثبت اثرات سامنے آئیں ہیں لہذا پولیس ملازمین کسی بھی جگہ تعیناتی کیلئے سفارشیں کروانے کی بجائے اردل روم میں اپنے مسائل سامنے لائیں۔گذشتہ اردل روم کی شنوائی کے نتیجہ میں مجموعی طور پر 430 افسران و ملازمین کے تقرروتبادلے عمل میں لائے گئے تھیہیں۔

مزید :

علاقائی -