ایس ایچ او ڈیفنس بی کو فون پر ماتحت اہلکار کا ننگی گالیاں دینا مہنگا پڑ گیا ،سی سی پی او لاہور نے فوری ایکشن لے لیا

ایس ایچ او ڈیفنس بی کو فون پر ماتحت اہلکار کا ننگی گالیاں دینا مہنگا پڑ گیا ...
ایس ایچ او ڈیفنس بی کو فون پر ماتحت اہلکار کا ننگی گالیاں دینا مہنگا پڑ گیا ،سی سی پی او لاہور نے فوری ایکشن لے لیا

  

لاہور(ڈیلی پاکستان آن لائن)کیپٹل سٹی پولیس آفیسر لاہور بی اے ناصر نے محرر تھانہ سے فون پر بدزبانی کا سخت نوٹس لیتے ہوئے ایس ایچ او تھانہ ڈیفنس (بی) علی اجود کو معطل کر دیاہے،ایس پی کینٹ کو واقعے کا انکوائری آفیسر مقرر کردیا گیا ۔

تفصیلات کے مطابق گذشتہ روز سوشل میڈیا پر ایس ایچ او ڈیفنس بی علی اجود کی آڈیو کال وائرل ہوئی تھی جس میں وہ پولیس سٹیشن کے محرر کو غلیظ گالیاں نکال رہے تھے،تھانے کے ماتحت اہلکاروں کا کہنا تھا کہ ایس ایچ او ڈیفنس بی اپنے ماتحت اہلکاروں کو ننگی گالیاں نکال کر ہی مخاطب کرتے تھے جبکہ پولیس اہلکاروں  اور سائلین کے ساتھ بھی ان کا رویہ انتہائی غیر مناسب ہوتا تھا ۔آڈیو کال سوشل میڈیا پر وائرل ہونے کے بعد مقامی شہریوں نےسی سی پی او لاہور سے ملاقات کر کے ایس ایچ او ڈیفنس بی کے خلاف شکایات کے انبار لگا دیئے جس پر سی سی پی او بی اے ناصر نے فوری ایکشن لیتے ہوئے علی اجود کو معطل کر دیا ہے ۔سی سی پی او لاہور بی اے ناصر کا کہنا تھا کہ ماتحت پولیس عملے اور شہریوں سے بدزبانی یا بدسلوکی ہرگز برداشت نہیں کی جاسکتی،لاہور پولیس کے تمام ملازمین کے لئے ضابطہ اخلاق جاری کیا گیا ہے جس پر عملدرآمد ہر صورت میں یقینی بنایا جائے گا۔ انہوں نے ہدایت کی کہ پولیس افسر فون پر یا بالمشافہ گفتگو کے دوران اخلاقیات کا دامن ہاتھ سے نہ چھوڑیں،پولیس ملازمین گفتگو کے دوران شائستگی کا مکمل خیال رکھا جائے۔ بی اے ناصر نے خبردار کیا کہ لاہور پولیس کے کسی افسر ےا اہلکار کی طرف سے آئندہ بھی بد زبانی یا نا شائستگی کی کوئی شکایت ملی تو سخت محکمانہ کارروائی کی جائے گی،تمام پولیس ملازمین ضابطہ اخلاق پر عملدرآمد یقینی بنائیں۔

مزید :

علاقائی -پنجاب -لاہور -