قائم علی شاہ سیدھے آدمی تھے،  صوبے میں مراد علی شاہ کے آنے کے بعد  کرپشن میں 50 فیصد اضافہ ہو گیا:حلیم عادل شیخ

قائم علی شاہ سیدھے آدمی تھے،  صوبے میں مراد علی شاہ کے آنے کے بعد  کرپشن ...
 قائم علی شاہ سیدھے آدمی تھے،  صوبے میں مراد علی شاہ کے آنے کے بعد  کرپشن میں 50 فیصد اضافہ ہو گیا:حلیم عادل شیخ

  

کراچی(ڈیلی پاکستان آن لائن)سندھ اسمبلی میں پاکستان تحریک انصاف کے پارلیمانی لیڈر  حلیم عادل شیخ نے کہا ہے کہ قائم علی شاہ سیدھے آدمی تھے  صوبے میں مراد علی شاہ کے آنے کے بعد  کرپشن میں 50 فیصد اضافہ ہو گیا ہے ،کراچی میں ایک بار پھر گمنام اور وردیوں میں چھپے ہوئے قاتل سامنے آ چکے ہیں ،کراچی میں سول کپڑوں میں پولیس دہشتگردی پھیلاتی ہے۔

  سندھ اسمبلی کےباہر میڈیا سے گفتگو    کرتے ہوئے پی ٹی آئی کے صوبائی پارلیمانی لیڈر حلیم عادل شیخ کا کہنا تھا کہ کراچی میں ہمارے لوگوں کو مارا جارہا ہے مگر پولیس خاموش سورہی ہے، ہمارے ایم پی اے ڈاکٹر سعید آفریدی کے کزن کو دن دیہاڑے مار دیا گیا ،قاتل آزاد گھوم رہے ہیں لیکن انہیں پکڑنے والا کوئی نہیں، پولیس ایک ایم پی اے کو بھی لاش دینے کے لئے رلاتی رہی۔انہوں نے کہا کہ میں سلام پیش کرتا ہوں وزیر اعلیٰ مراد علی شاہ کو جس نے سندھ میں بدترین کرپشن کرنے کا کارنامہ سرا نجام دیا ہے ،آڈیٹر جنرل نے رپورٹ دی ہے کہ 9 سالوں میں 957 ارب روپوں کی سندھ میں بے قاعدگیاں ہوئی ہیں، قائم علی شاہ سیدھے آدمی تھے جبکہ مراد علی شاہ کے آنے کے بعد 50فیصد کرپشن بڑھی ہے،مراد علی شاہ کے آتے ہی بے قاعدگیاں بڑھ گئی ہیں،9 سالوں میں اتنی بے قاعدگیاں ہوئی ہیں جتنی ماضی میں نہیں ہوئی تھی،پیپلز پارٹی والے سندھ میں پبلک اکاؤنٹس کمیٹی کا چیئرمین اپوزیشن کو نہیں بنانا چاہتے  کیونکہ ان کی کرپشن  بے نقاب ہوجائے گی،قانون اور دستور کی خلاف ورزی کی جارہی ہے،18ویں ترمیم کے نام پر کرپشن کی جارہی ہے،ان کو وفاق سے پیسہ سندھ کی عوام کے لئے نہیں کرپشن کرنے کے لئے چاہئے۔حلیم عادل شیخ کا کہنا تھا کہ  شہریوں کو ٹریفک قوانین پر عمل کرنا چاہیے، موٹرسائیکل چلاتے وقت ہیلمنٹ پہننا ضروری ہے، ہیلمنٹ پہننے سے بڑے حادثات  سے شہری بچ سکتے ہیں، بڑھتی ہوئی ٹریفک کے پیش نظر شہری حادثات سے بچنے کے لئے ہیلمنٹ کا استعمال کریں۔

مزید :

علاقائی -سندھ -کراچی -