مصالحتی جرگہ کی کاوشوں سے دیرینہ دشمنی کا خاتمہ

  مصالحتی جرگہ کی کاوشوں سے دیرینہ دشمنی کا خاتمہ

  



پشاور(سٹی رپورٹر)طارق اعوان قلعہ میں گرینڈ مصالحتی جرگے کی کامیاب کوششوں سے15سالہ دشمنی دوستی میں بدل گئی۔تفصیلات کے مطابق ارباب شبیر احمد خان گروپ(فریق اول) کا ارباب خالد خان (فریق دوم) کے مابین جائیداد پر تنازعہ چلا آ رہا تھا۔جس میں دونوں فریقین کے مابین تکرار ہوئی اور فائرنگ کے نتیجے ارباب شبیرزخمی ہوا اور بعد میں زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے جاح بحق ہو گیا جس کی دعویداری تھانہ حدود ٹاؤن میں دفعات302, علت نمبر201کے تحت بمورخہ4مارچ2005کوارباب خالدخان ولد ارباب نیاز محمد خان پر کی گئی تھی۔گزشتہ روز فریقین کے درمیان مصالحت کے لیے عوامی نیشنل پارٹی کے مرکزی ممبر کونسل الحاج ملک طارق اعوان کی سربراہی میں گرینڈ جرگہ تشکیل دیا گیاجس میں جرگہ ممبر مہدی جان، عوامی نیشنل پارٹی کے بزرگ رہنماالحاج غلام احمد بلور،الیاس احمد بلور، ارباب عالمگیرخان،عالمگیر خان خلیل، حاجی ہدایت اللہ،الحاج ملک سلیم اعوان،الحاج ملک ذرداد جہانگیر اعوان، ارباب وقار، ارباب امجد، سید نور علی شاہ باچا اور سینکڑوں کی تعداد میں حاضرین موجود تھے۔ جرگہ میں مفتی علی گل نے تلاوت قرآن پاک سے آغاز کیا۔جرگہ میں دونوں فریقین نے ایک دوسرے کوسینکڑوں حاضرین کے سامنے قرآن پاک کا تحفہ دیا اور کلمہ طیبہ کا ورد پڑھتے ہوئے بغل گیر ہو گئے اورایک دوسرے کو فی سبیل اللہ معاف کر کے آئندہ بھائیوں کی طرح رہنے کا عزم کیا۔تقریب سے الحاج ملک طارق اعوان نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ آگ جب بھی لگتی ہے چھوٹی سی چنگاری سے لگتی ہے اگر چنگاری پر برو قت قابو نہ پایا جائے تو خطرناک ثابت ہو سکتی ہے۔انھوں نے قرآن پاک کے 26ویں پارہ میں سورہ حجرات کی آیت نمبر9اور 10کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ اللہ کا حکم ہے کہ جب دو مومنوں کی آپس میں لڑائی ہو جائے تو ان میں صلح کراؤ اور اگر ایک فریق دوسرے پر زیادتی کرے تو مظلوم کا ساتھ دو۔ انکا کہنا تھا قرآن اور حدیث سے ثابت ہے کہ اسلام ہمیں امن اور بھائی چارہ کا درس دیتا ہے اس لیے ہمیں اپنے مذہب کی تعلیمات پر عمل پیرا کرتے ہوئے بھائی چارہ قائم رکھنا چاہیے اور تمام اختلاف بھُلا کر پیار محبت سے امن و سکون کے ساتھ زندگی بسر کرنی چاہیے۔ اس موقع پر الحاج غلام احمد بلور نے بھی خطاب کیا۔آخر میں ملک طارق اعوان نے دونوں فریقین، پولیس ڈیپارٹمنٹ،پرنٹ و الیکڑانک میڈیا، اور آئے ہوئے تمام سیاسی و سماجی اور دیگر تمام شرکاء کا شکریہ ادا کیا۔

مزید : پشاورصفحہ آخر