ملتان میں یوٹیلٹی سٹورز سے چینی غائب‘ شہری مایوس‘ حکام خاموش

  ملتان میں یوٹیلٹی سٹورز سے چینی غائب‘ شہری مایوس‘ حکام خاموش

  



ملتان (نیوز رپورٹر) حکومت کی جانب سے شہریوں کو سبسڈائز اشیاء کی فراہمی کے لیئے یوٹیلٹی سٹورز کارپوریشن کو 6 ارب روپے کی ادائیگی کے باوجود یوٹیلٹی سٹورز کو مکمل طور پر فعال ہونے اور شہریوں کو متوجہ کرنے میں مکمل طور پر ناکام رہے ہیں یوٹیلٹی سٹورز کی زبوں (بقیہ نمبر48صفحہ7پر)

حالی کا یہ عالم ہے کہ اوپن مارکیٹ میں گرانفروش مافیا کی جانب سے چینی کے نرخ بڑھانے کے عزائم پر زخیرہ اندوزی سے متاثر ہوکر پچھلے ایک ہفتہ سے ملتان ڈویڑن کے تمام یوٹیلٹی سٹورز سے چینی اچانک غائب ہوکر رہ گئی ہے اس صورتحال میں صارفین کی جانب سے جب چینی کا مطالبہ ہوتا ہے تو یوٹیلٹی سٹورز عملہ صارفین کو ایک دو دن کا کہہ کر ٹال دیتے ہیں تاہم یہ معمہ حل طلب ہے کہ یوٹیلٹی سٹورز کے ویئر ہاوسز میں چینی کا زخیرہ کم مقدار میں تھا کہ زخیرہ اندوزوں کی تقلید میں اوپن مارکیٹ کی نظر ہوگیا ہے صارفین کے مطابق حکومت کی جانب سے 6 ارب روپے کی ادائیگی کے باوجود یوٹیلٹی سٹورز پر بنیادی ضروریات کی اشیاء نہ ہونے کے برابر دکھائی دیتی ہیں ماسوائے چند گھی کے مخصوص برانڈز جو بہت کم استعمال میں آتے ہیں اسی طرح سیزن کے برعکس مشروبات کا انبار چند مخصوص برانڈز کے صابن اور واشنگ پاوڈرز کے پیکٹس سے یوٹیلٹی سٹورز کے رینکز پر انبار نظر آتے ہیں روز مرہ کے استعمال میں آنے والے گھی اور آئل کے برانڈز سمیت معیاری چاول اور دالیں بھی ناپید ہیں حکومت کی جانب سے کچھ عرصہ قبل یہ اطلاعات آرہی تھیں کہ بینظیر انکم سپورٹ پروگرام موجودہ (کفالت احساس) کے تحت رجسٹرڈ خاندانوں کو ماہانہ نقد امدادی رقوم فراہم کرنے کی بجائے ان خاندانوں کو یوٹیلٹی سٹورز کے ذریعے اشیائے خورونوش فراہم کی جائیں گی جو کہ ایک اچھی پیشرفت ہوسکتی ہے جس سے شہریوں کو ارزاں نرخوں پر ضروریات زندگی میسر آنے کے ساتھ یوٹیلٹی سٹورز کارپوریشن کے ایک بار پھر سے فعال ہونے سمیت ہزاروں ملازمین کے سر پر جو متوقع بیروزگاری کی تلوار لٹک رہی ہے اس سے بھی نجات مل جائے گی۔

حکام خاموش

مزید : ملتان صفحہ آخر