ٹرمپ کی کامیابی پرروسی حکام نے ایک دوسرے کو پر جوش مبارک بادیں دیں

ٹرمپ کی کامیابی پرروسی حکام نے ایک دوسرے کو پر جوش مبارک بادیں دیں

 واشنگٹن (اظہر زمان، خصوصی رپورٹ) ڈیمو کریٹک پارٹی اور ہیلری کلنٹن کی ای میلز کو ہیک کرنے اور امریکی انتخابی نظام کے ڈیٹا بیس میں مداخلت کر کے ٹرمپ کی جیت کی راہ ہموار کرنے کا جو الزام روس پر لگا تھا اس کے اثرات بڑھتے جارہے ہیں۔ صدر اوباما کی سبکدوش ہونے والی انتظامیہ اور کریملن کے درمیان سفارتی جنگ عروج پر پہنچ چکی ہے، تاہم روسی حکام نامز د صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے اقتدار سنبھالنے کا انتظار کررہے ہیں اور ان کے خیال میں اس نئے دور میں امریکہ اور روس کے تعلقات اوباما انتظامیہ کے دور کی نسبت بہت بہتر ہو جائیں گے۔ اس وقت صورت حال یہ ہے کہ سی آئی اے اور ایف بی آئی سمیت امریکہ کی تمام انٹیلی ایجنسیاں امریکی انتخابی نظام میں ٹرمپ کے حق میں مداخلت کے نت نئے شواہد پیش کررہی ہیں۔ سی آئی اے نے اس سلسلے میں اپنی رپورٹ کا پہلا حصہ کانگریس میں پیش کردیا ہے۔ دلچسپ بات یہ ہے کہ امریکی نظام میں روسی مداخلت کے مسئلے پر کانگریس کے دونوں ایوانوں میں دونوں پارٹیوں کی اکثریت متحد نظر آتی ہے اور روس کے خلاف شواہد کی تصدیق ہونے پر ڈونڈ ٹرمپ کی اپنی ری پبلیکن پارٹی بھی ٹرمپ کی مرضی کے خلاف فیصلہ دے سکتی ہے۔ روسی صدر پیوٹن اور انتظامیہ کے اعلیٰ حکام پر مسلسل الزامات لگ رہے ہیں اور سی آئی اے نے ایک تازہ رپورٹ جاری کی ہے جس میں روسی حکام کی ٹرمپ کی کامیابی پر ایک دوسرے کو مبارکباد دینے کا ثبوت فراہم کیا گیا ہے۔

سیکیورٹی مبصرین سمجھتے ہیں کہ ڈونلڈ ٹرمپ کو اقتدار سنبھالنے کے بعد سب سے زیادہ پریشانی انٹیلی جنس اداروں کی طرف سے پیش آئے گی جو انہیں جتانے کے لئے روسی مداخلت کی اعلاعات دیتے رہے ہیں۔ اسی لئے ٹرمپ ٹیم کی طرف یہ اعلان سامنے آچکا ہے کہ ٹرمپ پہلی فرصت میں انٹیلی جنس نظام میں بنیادی تبدیلیاں لانے والے ہیں ۔ ان کا کہنا ہے کہ ان اداروں کو سیاسی اثرات سے محفوظ کرنے کے لئے ان کی وسیع تطہیر ضروری ہے جس کے تحت وسیع پیمانے پر چھانٹیاں اور تبدیلیاں لائی جائیں گی۔ اس دوران نیشنل انٹیلی جنس کے ڈائریکٹر جیمز کلیپر نے گزشتہ شام سینٹ کی آ رمڈ سروسز کمیٹی کے سامنے شہادت دیتے ہوئے بتایا کہ روس نے نہ صرف امریکی انتخابی نظام میں مداخلت کی بلکہ ڈس انفارمیشن پھیلاکر جعلی خبریں بھی نشر کیں اس پس منظر میں ٹرمپ کے اقتدار سنبھالنے کے فوراً بعد ان کی کانگریس اور انٹیلی جنس اداروں کے ساتھ زبردست محاذ آرئی کی توقع کی جارہی ہے۔

مزید : صفحہ اول


loading...