بغیر رجسٹرڈ ادویات بنانے والی 4فیکٹریاں سیل، مالکان گرفتار، 5کو وارننگ، تین ماہ کے اندر صوبے کو جعلی ادویات سے پاک کردیں گے: خواجہ عمران نذیر

بغیر رجسٹرڈ ادویات بنانے والی 4فیکٹریاں سیل، مالکان گرفتار، 5کو وارننگ، تین ...

لاہور(جاوید اقبال)وزیر اعلیٰ ٹاسک فورس برائے انسداد جعلی ادویات نے ملتان روڈ پر واقع ادویات بنانے کی فیکٹریوں پر کامیاب چھاپے مارے اس دوران بعض فارماسوٹیکل کمپنیوں سے انسانوں اور جانوروں کیلئے اکٹھی ادویات تیار کی جا رہی تھیں اس دوران 4فیکٹریوں سے بغیر رجسٹرڈادویات پکڑی گئیں جس پر انہیں سیل کر کے ان کے مالکان کو گرفتار کر لیا گیا۔چھاپہ مارٹیم نے صوبائی وزیر صحت اور چئیرمین وزیر اعلیٰ ٹاسک فور برائے صحت خواجہ عمران نذیر کی سربراہی میں چھاپے مارے جبکہ دیگر ممبران میں لاہور کے تمام سنئیر ڈرگ انسپکٹروں جن میں شوکت وہاب،بلال یٰسین،اظہر جمال سلیمی،رانا شاہد،عمران سرفراز،مس صدف اور ساجد سبحانی نے بھی حصہ لیا۔چھاپہ مار ٹیم نے ملتان روڈ سے اوکاڑہ اور ساہیوال تک کے درمیان واقع فارماسوٹیکل کمپنیوں جن میں اکثریت ہربل اور یونانی ادویات بنانے والی فیکٹریوں کی تھی ان پر چھاپے مارے اس دوران مشتاق لیبارٹریز پر چھاپہ مارا گیا تو یہاں تما م ادویات رجسٹرڈ نہیں تھیں اور نہ ہی تیار کی گئی ادویات پر بیج نمبر لگائے گئے تھے اس فیکٹری میں جانوروں اور انسانوں کیلئے ایک ساتھ ادویات تیار کی جارہی تھیں جبکہ مشینر ی زنگ آلود تھی اس فیکٹری کو موقع پر سیل کر دیا گیا اور متعلقہ ڈرگ انسپکٹر ساجد سبحانی نے اس فیکٹری کے مالکان کے خلاف مقدمہ درج کر دیا جس کے بعد پولیس بلا کر اس فیکٹری کے مالک کو گرفتار کر لیا گیا ۔بعد ازاں صوبائی وزیر صحت اپنی ٹیم کے ہمراہ سونوکو ہربل فارماسوٹیکل پر چھاپہ مارا تو یہاں بھی ڈرگ ایکٹ کی خلاف ورزیاں پائی گئیں۔ڈرموں میں گڑ شکر کا محلول بنا کر کھانسی کا شربت تیار کیا جا رہا تھا۔جس پر اس فیکٹری کو بھی سیل کر دیا گیا۔اسی طرح بگ فارما سوٹیکل کا معائنہ کیا گیا تو یہاں پر بھی ڈریپ کی رجسٹریشن موجود نہیں تھی اور غیر قانونی طور پر بغیر رجسٹر ادویات تیار کی گئی تھیں اس فیکٹری کو بھی سیل کر کے مالک ڈاکٹر رمضان کو موقع پر گرفتار کر لیا گیا،اسی طرح گزشتہ روز کل 9فیکٹریوں پر چھاپے مارے گئے جن میں سے 4کو سیل اور 5کو وارننگ جاری کی گئی۔صوبائی وزیر صحت پرائمری و سیکنڈری ہیلتھ اور ٹاسک فورس برائے صحت کے چئیرمین خواجہ عمران نذیر نے کہا کہ جعلی اور ان رجسٹر ادویات بنانے والے کمپنیاں انسانیت کی قاتل ہیں وہ ہربل یونانی ادویات بنائیں یا ایلو پیتھک انہیں معاف نہیں کیا جائے گا وہ پاکستان سے گفتگو کر رہے تھے۔صوبائی وزیر نے کہا کہ وزیر اعلیٰ ٹاسک فورس پورے صوبے میں متحرک ہے اور آئندہ تین ماہ کے اندر صوبے کو جعلی ادویات سے پا ک کر دیں گے۔

مزید : صفحہ آخر


loading...