اسلامی فوجی اتحاد کی طرح مسلمان اپنی عالمی منڈیاں اور عدالتیں بھی قائم کریں: حافظ سعید

اسلامی فوجی اتحاد کی طرح مسلمان اپنی عالمی منڈیاں اور عدالتیں بھی قائم کریں: ...

لاہور(خبر نگار خصوصی)امیر جماعۃالدعوۃ پاکستان پروفیسر حافظ محمد سعید نے کہا ہے کہ اسلامی فوجی اتحاد کی طرح مسلمان اپنی بین الاقوامی منڈیاں اور عدالتیں بھی قائم کریں۔ اگر یورپی یونین ،یورو اور ڈالر بن سکتا ہے تو اسلامی یونین اور اسلامی کرنسی کیوں نہیں؟۔اقوام متحدہ مسلمانوں کے مسائل حل کرنے کیلئے کوئی کردار ادا نہیں کر رہی۔ مسلم ممالک اپنے مسائل کے حل کیلئے امریکہ اور یورپی یونین کی طرف دیکھنا چھوڑ دیں۔باہم اتحادویکجہتی کے ذریعہ ہی مسلمان ملک بیرونی سازشوں کا مقابلہ کر سکتے ہیں۔امریکہ کی طرف سے بھارتی خوشنودی کیلئے المحمدیہ سٹوڈنٹس پر پابندی لگائی گئی۔ وہ مرکز ابن باز چوک رشید آباد میں جنوبی پنجاب کے مختلف اضلاع سے تعلق رکھنے والے کارکنان و ذمہ داران کی تربیتی نشست سے خطاب کر رہے تھے۔اس موقع پر جماعۃالدعوۃ کے مرکزی رہنما مولاناسیف اللہ خالد، میاں سہیل احمد ودیگر نے بھی خطاب کیا۔ جماعۃالدعوۃ کے سربراہ حافظ محمد سعید نے کہاکہ کشمیر پاکستان کے لیے زندگی اور موت کا مسئلہ ہے۔ جس طرح کشمیری عوام پاکستان کے لیے اپنی جانیں قربان کر رہے ہیں‘ حکومت پاکستان کو بھی اسی انداز میں ان کی مدد کرنی چاہیے اور اس سلسلہ میں تمام وسائل استعمال کرنے چاہئیں۔ہم انسانی اعتبار سے کشمیر کی بات کرتے ہیں۔اگر امریکہ میں بھی انسانوں پر ظلم ہو رہا ہو تو اس کے لیے بھی آواز اٹھائیں گے۔امریکہ بھارت کا اتحادی ہے۔ وہ صرف انڈیا کی وجہ سے ہم پر الزام لگاتا ہے۔جب سے ہم نے کشمیریوں کے لیے آواز بلند کرنا شروع کی ہے بھارت و امریکہ ہمارے خلاف سرگرم ہو گئے ہیں۔کشمیریوں کی موجودہ تحریک میں ہم نے کشمیریوں کی بھر پور مدد کی ہے۔انہوں نے کہاکہ ہمارا اکنامک سسٹم مسائل کی اصل جڑ ہے۔ہماراسب سے بڑا مسئلہ یہ ہے کہ ہم نے دین کو اپنی معاشرتی زندگی سے الگ کر دیا ہے اور ہمارا س سے تعلق بالکل کٹ کر رہ گیا ہے ۔ہمیں اپنے ان مقرر کردہ دائروں سے نکلنا ہو گا۔ہم انسانوں کے مسائل حل کر رہے ہیں۔ہماری جماعت کا سب سے بڑا کام ریلیف کا ہے۔ہم نے بلوچستان میں 1000کنویں بنائے ہیں۔حافظ محمد سعید نے کہاکہ بلوچستان کے مسائل بہت زیادہ ہیں۔بلوچ قبائل اور قوم پرست جماعتوں کے لیڈروں نے ہمارا بہت ساتھ دیاہے، وہ بلوچستان میں ہمارے ساتھ ملکر کام کر رہے ہیں۔یہاں کے لوگوں نے جو محبت دی وہ پورے پاکستان میں نہیں ملی۔

مزید : صفحہ آخر


loading...