وفاقی حکومت نے دبئی کے شاہی خاندان کو ’تلور‘ کے شکار کی اجازت دیدی

وفاقی حکومت نے دبئی کے شاہی خاندان کو ’تلور‘ کے شکار کی اجازت دیدی
وفاقی حکومت نے دبئی کے شاہی خاندان کو ’تلور‘ کے شکار کی اجازت دیدی

  


کراچی(ڈیلی پاکستان آن لائن)وفاقی حکومت نے دبئی کے شاہی خاندان کو’ تلور ‘کے شکار کے اجازت نامے جاری کردیئے ہیں۔ تفصیلات کے مطابق وفاقی حکومت پاکستان میں موجود نایاب پرندے’ تلور ‘کے شکار کیلئے کم از کم سات خصوصی اجازت نامے دبئی کے حکمران شیخ محمد بن راشد المکتوم اورشاہی خاندان کے دیگر افراد کو جاری کیے ہیں۔ذرائع کے مطابق نایاب پرندے ’تلور‘کے شکار کیلئے جن افراد کو اجازت نامے جاری کیے ہیں ان میں دبئی کے نائب حاکم،شہزادہ،نائب پولیس چیف،ایک اعلیٰ فوجی عہدیدار،شاہی خاندان کے افراد ،گورنمنٹ موجود افراد اور کاروباری افراد شامل ہیں۔

سعودی شہری نے پاکستانی سے 60 لاکھ روپے کی گاڑی خرید لی، لیکن لے کر گھر پہنچا تو ایسا انکشاف کہ پیروں تلے زمین نکل گئی، پاکستانی شہری نے کیسے بے وقوف بنایا؟ جان کر آپ بھی چکرا جائیں

شکار کیلئے جن تین صوبوں کو شامل کیا گیا ہے ان میں سندھ،بلوچستان اور پنجاب ہے۔وسطی ایشیاءکے سرد علاقوں میں رہنے والا ’تلور‘موسم کی سختی سے بچنے کیلئے ہر سال پاکستان کے جنوبی علاقوں کا رخ کرتا ہے۔اجازت نامہ پر دستخط کیلئے وزارت خارجہ کے نائب پروٹوکول چیف نعیم اقبال چیمہ نے اسلام آباد میں پاکستانی سفارت خانے کو ارسال کیا۔چیمہ نے اجازت نامہ کی کاپیاں محکمہ وائلڈ لائف و دیگر کو بھی ارسال کیں۔ذرائع کے مطابق جن لوگوں کو اجازت نامے جاری کیے گئے ہیں ان میں متحدہ عرب امارات کے نائب صدراور ریاست دبئی کے حکمران بھی شامل ہیںکو پاکستان کے علاقوں مظفر گڑھ،خضدار،لسبیلہ اور نوکنڈی جو کہ ضلع چاغی میں واقع ہے بھی شامل ہے۔’تلور‘ کے شکار کیلئے قواعد و ضوابط بھی جاری کیے گئے ہیں کہ شکاریوں کو دس دنوں میں 100 پرندے شکار کرنے کی اجازت ہوگی۔ شکار کا سیزن یکم نومبر سے اگلے سال 31 جنوری تک ہوتا ہے۔

مزید : قومی


loading...