ترمیمی بل کی منظوری، نوازشریف سے پوچھوں گاکہ یہ کیاہوا، جاوید ہاشمی

ترمیمی بل کی منظوری، نوازشریف سے پوچھوں گاکہ یہ کیاہوا، جاوید ہاشمی

  



ملتان (نیوز رپورٹر) سینئیر سیاستدان ولیگی رہنما مخدوم جاوید ہاشمی نے کہا ہے کہ ترمیمی بل کی منظوری پر سیاست سے استعفی دینا چاہتا تھا لیکن دل اور دوستوں نے کہا بزدلی مت دکھاو اور ھتیار نہ پھینکو۔ دکھی دل کے ساتھ کہ رھا ھوں کہ پارٹی فیصلہ سے متفق نہیں ھوں۔ نواز شریف سے ضرور پوچھونگا کہ یہ سب کچھ کیسے،اور کیوں ھوا۔ اگر مریم نواز لندن میں ھوتیں تو مسلم لیگ ن کبھی ایسا فیصلہ نہ کرتی۔ سویلین بالادستی کی جنگ نوازشریف نے بھٹو سے بھی(بقیہ نمبر31صفحہ12پر)

زیادہ لڑی ہے۔ پچاس سالوں بعد بھی یہ سوچ رھا ھوں کہ جن بڑوں نے یہ فیصلہ کیا ھے ان سے بغاوت کردوں۔ اس ملک کی بد قسمتی یہ ھے کہ اسٹیبلشمنٹ نے سویلینز کی کسی بھی حکومت کو اختیارات کبھی نہیں دیئے۔ سویلینز بالادستی کی جنگ ختم بھی ھو جائے تو میں یہ جنگ لڑتا رھونگا۔،پارلیمینٹ،عوام،جمہوریت اور افواج پاکستان کے لئے آخری سانس تک یہ جنگ لڑتا رھونگا۔ یہ جنگ تو اب ختم ہوتی نظر آرہی ہے لیکن میں آخری سانس تک ہتھیار نہیں پھینکوں گا۔ ممکن ہے کہ پانچ مہینے بعد عمران خان کی حکومت نہ رہے۔ حکومت نے عوام کو حد سے زیادہ مایوس کیا ھے۔ ملک میں مارشل لاء کی بھی اب ضرورت نہیں رھی۔ ھماری بدقسمتی یہ بھی ھے کہ سیاسی جماعتوں میں بھی جمہوریت نہیں ھے تاھم عوام میں یہ شعور آچکا ھے کہ پارلیمنٹ کی بالادستی کو تسلیم کئے بغیر ملک آگے نہیں جا سکتا ہے بلکہ کء ریٹائرڈ جرنیلوں نے بھی کتابیں لکھ دی ھیں کہ ملک وقوم کے لئے پارلیمنٹ کی بالادستی ضروری ہے۔ نواز شریف اور مریم سمیت مسلم لیگ ن کی اکثریت کی جنگ وھی ھے جو میں لڑ رھا ھوں۔ میرے فالج زدہ جسم کی آواز پہلے سے زیادہ مضبوط اور بلند ھے۔ ان چند سالوں میں یہ ترمیم مجھے دکھی کر گئی۔ میرا فرض ھے کہ ملک میں ھر خرابی کے خلاف آواز اٹھاوں۔ مریم کو جو امتحان دیا گیا تھا وہ پاس کر گء۔آج نہیں تو وہ کل ضرور بولے گی۔نواز شریف اور مریم نے شدید مشکلات کا سامنا کیا اور بہت قربانیاں دی ہیں۔ شاھد خاقان عباسی، خواجہ سعد رفیق،احسن اقبال ودیگر لیگی رہنماؤں وکارکنان نے قربانیوں کی لازوال داستانیں رقم کی ھیں۔ امریکہ ایران کشیدگی میں ہمیں اسلامی ممالک سے بات کرنی چاہئے تھی۔ لیکن امریکی اشارے پر ہم غیر جانبدار ہوگئے اس جنگ کا سب سے زیادہ نقصان ہمیں ہوگا۔ جاوید ہاشمی کا میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے مزید کہنا تھا نواز شریف سے ضرور پو پوچھونگا کہ یہ کیا ھوا ھے۔؟ آج مسلم لیگ پر کڑا وقت ہے ملک پر اس سے بھی کڑا وقت ہے آرمی ایکٹ میں مطلوبہ ترمیم کر کے سقم دور کر دیا گیا ھے تمام پارٹیوں نے متفقہ طور پر ترمیم منظور کی حکومت کا اختیار کب سویلینز کو ملے گا بد قسمتی سے وہ دن نہیں آیا پاکستان کے اندر لمبی جدوجہد کی گئی ہے۔ ہماری پارٹی کا موقف تھا پاکستان کے ووٹ کو عزت نہیں دی گئی عزت ملی تو ملک چل پڑے گا: پارلیمنٹ کے اندر ووٹ نے ہی ترمیم کی اجازت دی ہے دکھی دل کے ساتھ کہتا ہوں پارٹی کے فیصلے سے متفق نہیں ہوں مجھے سوچنا پڑ رہا ہے کہ میں بڑوں سے بغاوت کروں؟: دس سال فالج کی بغاوت پرانی بغاوت سے بھی سخت تھیں آئین اور سویلینز کی بالادستی کے بغیر یہ ملک نہیں چل سکتا ھے پاکستان،عوام،افواج،عدلیہ سمیت نظام کی درستگی کے لئے پارلیمنٹ کی بالادستی کی جنگ لڑتا رھونگا۔ میاں نواز شریف نے کہا کہ میں نے یہ جنگ لڑنی ہے اور انھوں نے یہ جنگ لڑی میاں صاحب نے کہا میرا بیانیہ وہی ہے جو آپ کا ہے میاں نواز شریف کو دوبارہ اقتدار ملا تو شکرانے کے نوافل پڑھوں گا۔ ایران ہمارا برادر اسلامی ملک ہے، ہمیں ترکی اور دیگر اسلامی ممالک کے ساتھ بات کرنی چاہیے۔

جاوید ہاشمی

مزید : ملتان صفحہ آخر