احتساب عدالت، شہباز شریف کی میڈیکل رپورٹ پیش، حاضری سے استثنی ک استدعا پر فیصلہ محفوظ

  احتساب عدالت، شہباز شریف کی میڈیکل رپورٹ پیش، حاضری سے استثنی ک استدعا پر ...

  



لاہور(نامہ نگار)احتساب عدالت نے آشیانہ اقبال ہاؤسنگ سکیم اوررمضان شوگر ملزکیس میں اپوزیشن لیڈرمیاں شہباز شریف کی ایک دن (منگل)7جنوری کی حاضری معافی کی استدعا منظور کرلی جبکہ شہباز شریف کی حاضری استثنیٰ سے متعلق درخواست پر فیصلہ 17جنوری تک محفوظ کرلیاتاہم عدالت نے حمزہ شہباز کے جوڈیشل ریمانڈ میں 17جنوری تک توسیع کر دی، دوران سماعت پراسیکیوٹر وارث جنجوعہ اور شہبازشریف کے امجد پرویز ملک کے (بقیہ نمبر10صفحہ12پر)

درمیان تلخ کلامی بھی ہوئی۔وکیل احتساب عدالت کے جج امجد نذیر چودھری نے آشیانہ اقبال ہاؤسنگ سکیم ریفرنس کی سماعت کی،نیب کی طرف سے سپیشل پراسکیوٹر وارث علی جنجوعہ پیش ہوئے،عدالت میں ملزمان فواد حسن فواد، احد خان چیمہ، شاہد شفیق، منیر ضیا ء، علی سجاد، چودھری شاہد، چودھری صادق، امتیاز حیدر، بلال قدوائی، مدثر بیگ کی حاضری مکمل کی گئی،کیس کی سماعت شروع ہوئی توشہباز شریف کی حاضری معافی اور میڈیکل سرٹیفکیٹ عدالت میں پیش کر دیئے گئے۔ شہباز شریف کے وکیل امجد پرویز ملک نے موقف اختیار کیا کہ شہباز شریف عدالتوں میں مسلسل پیش ہوتے رہے ہیں، اسی احتساب عدالت نے آشیانہ اقبال کیس میں شہباز شریف کی طبی بنیادوں حاضری معافی کی درخواست منظور کی تھی، شہباز شریف اپنے بھائی کے علاج کیلئے گئے ہیں اور اپنے علاج کیلئے بھی ڈاکٹر سے ٹائم لیا ہے، بیرون ملک میں 15 جنوری 2020ء تک شہباز شریف نے ڈاکٹروں سے ٹائم لے رکھا ہے،  انہوں نے عدالت کو یقین دلایا کہ شہباز شریف کی عدم موجودگی میں کیس چلتا رہے گا،انہوں نے ٹرائل کے فیصلے تک شہباز شریف کر حاضری سے استثنیٰ کی استدعا کی اور کہا کہ اگر میاں نواز شریف صحت یاب ہو جاتے ہیں تو واپس آجائیں گے، سپیشل پراسکیوٹر نیب وارث علی جنجوعہ نے دلائل دیتے ہوئے کہا کہ میاں شہباز شریف احتساب عدالت کی اجازت کے بغیر بیرون ملک گئے، ملزم کے ذاتی حیثیت میں عدم موجودگی پر کیسے حاضری سے استثنیٰ کی درخواست منظور جا سکتی ہے، میاں شہباز شریف کے ناقابل ضمانت وارنٹ گرفتاری جاری کئے جائیں، میاں نواز شریف کے 2 بیٹے وہاں موجود ہیں تو شہباز شریف کی موجودگی بلاجواز ہے، پراسیکیوٹر وارث جنجوعہ نے کہا کہ میاں نواز شریف کے دونوں بیٹے بیرون ملک موجود ہیں، نواز شریف کے بیٹوں کی موجودگی میں شہباز شریف کو واپس آنا چاہئیے تھا، جس پر امجد پرویز نے کہا کہ آپ کا مطلب ہے کہ اگر کسی کے بیٹے موجود ہیں تو بھائی اپنے بھائی کا خیال کرنا چھوڑ دے؟ عدالت نے وکلا ء کی تلخ کلامی پر مداخلت کرتے ہوئے وکلاء کے دلائل سننے کے بعد شہباز شریف کر حاضری سے استثنیٰ کی درخواست پر اپنا فیصلہ 17جنوری تک محفوظ کرلیا۔

فیصلہ محفوظ

مزید : ملتان صفحہ آخر


loading...