لو میرج کرنیوالی خاتون بازیاب خاوند مسلمان ثابت ہونے تک دارالامان منتقل

لو میرج کرنیوالی خاتون بازیاب خاوند مسلمان ثابت ہونے تک دارالامان منتقل

  



لاہور(نامہ نگارخصوصی)لاہورہائی کورٹ نے غیر مسلم نوجوان سے شادی کرنے والی لڑکی کو بازیاب کرواکے دارلامان بھجوادیا،عدالت نے یہ کارروائی تہذیب نامی لڑکی کی والدہ آصفہ بی بی کی درخواست پر کی ہے،لڑکی کی طرف سے عدالت کو بتایا گیا کہ اسے اس کے ماموں کے گھر سے بازیاب کرکے پولیس نے عدالت میں پیش کیاہے،لڑکی نے عدالت کو بتایا کہ اس نے جس لڑکے سے پسند کی شادی کی ہے وہ نکاح سے پہلے مسلمان ہوگیاتھا،عدالت نے قراردیاکہ کوئی مسلمان لڑکی کسی غیر مسلم سے شادی نہیں کرسکتی خواہ کوعاقل وبالغ ہی کیوں نہ ہو،عدالت نے نکاح کے وقت لڑکے کے مسلمان ہونے کاثبوت طلب کیاتولڑکی کاوکیل تسلی بخش جواب نہ دے سکا،لڑکی بولی کہ اس نے اپنی مرضی سے پسندکی شادی کی ہے،اس کا خاوند شادی سے پہلے مسلمان ہوچکاتھا،عدالت نے اپنے سوال کا اعادہ کیا کہ لڑکے کے مسلمان ہونے کے بارے میں ثبوت فراہم کریں،ثبوت فراہم نہ کرنے پرعدالت نے لڑکی کو دارالامان بھجوادیا۔

خاوند مسلمان؟

مزید : صفحہ آخر