”یہ ایک پروگرام کی بات نہیں بلکہ اختلافات اس وقت شروع ہوئے جب سات مہینے پہلے “دیرینہ دوستی شدید اختلاف میں کیسے تبدیل ہوئی ،مبشر لقمان نے بتا دیا

”یہ ایک پروگرام کی بات نہیں بلکہ اختلافات اس وقت شروع ہوئے جب سات مہینے پہلے ...
”یہ ایک پروگرام کی بات نہیں بلکہ اختلافات اس وقت شروع ہوئے جب سات مہینے پہلے “دیرینہ دوستی شدید اختلاف میں کیسے تبدیل ہوئی ،مبشر لقمان نے بتا دیا

  



لاہور(ڈیلی پاکستان آن لائن )اینکر پرسن مبشر لقمان نے کہا ہے کہ فواد چوہدری سے صرف ایک پروگرام کی وجہ سے لڑائی نہیں ہوئی بلکہ اس کے پیچھے کئی ماہ کا اختلاف ہے ۔ویڈیو پیغام میں انہوں نے کہا کہ بہانہ بنا یا جا رہا ہے کہ میں نے ایک صحافی کا انٹر ویو کیا جس میں صحافی نے دعویٰ کیا کہ فواد چوہدری نے حریم شاہ اور صندل خٹک کا انٹر ویو کیا ۔فواد چوہدری سے بہت دوستی رہی سب کو پتہ ہے لیکن ان کے وزیر بننے کے بعد میری اور ان کی دوستی ختم ہو گئی جس کی کئی وجو ہات ہیں ۔مبشر لقما ن نے بتا یا کہ اختلافات کی سب سے بڑی وجہ یہ تھی کہ جب عمران خان نے ارشد خان کو ایم ڈی پی ٹی وی بنایاتو فواد چوہدری نے مخالفت شروع کر دی اور یونینز کو بھڑکا کر کہا کہ پی ٹی وی ہیڈ کوارٹر پر قبضہ کر لو اور ارشد خان کو نہ آنے دو ۔اس صورتحال پر میں نے کئی پروگرام کیے اور فواد چوہدری کو آڑے ہاتھوں لے کر ان کی بطور وزیر اطلاعات پالیسیوں کو تنقید کا نشانہ بنا یا ۔فواد چو ہدری نے نیوز چینل بند کر کے انٹرٹینمنٹ پر توجہ دینے کی بات کی حالانکہ اسی الیکٹرانک میڈ یا اور سوشل میڈ یا نے تحریک انصاف کی حکومت بنانے میں بڑا کردار ادا کیا ،جب فواد چوہدری نے میڈ یا کی مخالفت کی تو عمران خان کو احساس ہو گیا کہ فواد چوہدری اچھے وزیراطلاعات نہیں ہیں ۔ جب وزیراعظم نے فواد چوہدری کو وزارت اطلاعات سے الگ کیا تو انہوں نے اپنے ساتھیو ں سے کہاکہ مبشر لقمان کی وجہ سے مجھے وزارت اطلاعات سے الگ کیا گیا۔مبشر لقمان نے کہا کہ

سمیع ابراہیم کی اور فواد چوہدری کی تلخ کلامی ہوئی تو ایک نجی محفل میں فواد چوہدری نے سمیع ابراہیم کو گالیاں دیں اور پھر تھپڑ مار کر غائب ہو گئے ،سمیع ابراہیم کو تھپڑ مارنے کے بعد مجھے بھی اسی قسم کے نتائج کی دھمکی دی تھی ۔لیکن وہ مجھے دھمکا نہیں سکتے کیونکہ میں اسی طرح لوگوں کوبے نقاب کرتا رہوں گا ۔

مزید : قومی