سپریم کورٹ نے آرمی چیف کی مدت میں توسیع کا ایشو زبر دستی پارلیمنٹ میں بھیجا ، دفاعی تجزیہ کار لیفٹیننٹ جنرل (ر)امجد شعیب کا دعویٰ

سپریم کورٹ نے آرمی چیف کی مدت میں توسیع کا ایشو زبر دستی پارلیمنٹ میں بھیجا ، ...
سپریم کورٹ نے آرمی چیف کی مدت میں توسیع کا ایشو زبر دستی پارلیمنٹ میں بھیجا ، دفاعی تجزیہ کار لیفٹیننٹ جنرل (ر)امجد شعیب کا دعویٰ

  



اسلام آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن) دفاعی تجزیہ کار لیفٹیننٹ جنرل (ر)امجد شعیب نے کہاہے کہ آرمی چیف کی مدت میں توسیع کا ایشو سیاسی نہیں تھا ، یہ ایشو سپریم کورٹ نے زبردستی پارلیمنٹ میں بھیجا ،ن لیگ کو توسیع کے معاملے پراختلاف نہیں تھا۔

دنیا نیوز کے پروگرام ”رپورٹ کارڈ“میں گفتگو کرتے ہوئے لیفٹیننٹ جنرل (ر) امجد شعیب نے کہا کہ آرمی ایکٹ ترمیم ایک سیاسی مسئلہ تھا ہی نہیں ، پہلے عمران خان نے کہا کہ میں نے توسیع دیدی تو کسی نے اس پراعتراض نہیں کیا اور نہ احتجاج کیا ۔انہوں نے کہا کہ اگر ن لیگ کو اس پر اعتراض تھا توبات پارلیمنٹ میں تو بعد میں آئی پہلے کیوں نہیں بولے ،ن لیگ میں سے کسی نے بھی یہ نہیں کہا کہ یہ کام نہیں ہوناچاہئے ،ہم اس کے مخالف ہیں ،اگر یہ بات تھی تو نرم لہجے میں ہی کہہ دیتے کہ یہ کام نہیں ہوناچاہئے ۔

لیفٹیننٹ جنرل (ر)امجد شعیب کا کہناتھا کہ یہ سیاسی ایشونہیں تھا ،یہ ایشو سیاسی ہوتاتو اس پرسیاست ہونی چاہئے تھی ۔انہوں نے کہا کہ یہ ایشو سیاسی نہیں تھا ، یہ ایشو سپریم کورٹ نے زبردستی پارلیمنٹ میں بھیجا ہے ۔ن لیگ کو توسیع کے معاملے پراختلاف نہیں تھا ، اس بات پر اختلاف تھا کہ تحریک انصاف کی ہینڈلنگ بہت خراب تھی ۔انہوں نے کہا کہ یہ میرے لئے حیرانگی کی بات ہے کہ جب یہ بل پارلیمنٹ میں آگیا تو اس پر جو بحث ہونی چاہئے تھی ، وہ نہیں ہوئی ، یہ تو کہا جاسکتا تھا کہ توسیع تین سال کیلئے کیوں دی جارہی ہے؟ ایک سال کے لئے بھی دی جاسکتی ہے ۔

مزید : قومی