ناجائز قابضین سے 3ہزار ایکڑز مین واگزار کروالی، وزیرجنگلات پنجاب 

ناجائز قابضین سے 3ہزار ایکڑز مین واگزار کروالی، وزیرجنگلات پنجاب 

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

   لاہور(سٹی رپورٹر)  محکمہ جنگلات کو کسان بھائیوں کے لیے پودوں کی فراہمی کے لئے کسان دوست رابطہ پروگرام شروع کرنے کی ضرورت ہے۔ نرسری میں پودوں کی کافی مقدار میں دستیابی کے لیے اخبار اور ٹی وی میں اشتہار کے ذریعے پبلسٹی کو یقینی بنایا جائے۔محکمہ زراعت و جنگلات پودوں کے توسیعی پراجیکٹس میں ایک دوسرے کی اعانت و تعاون سے طے شدہ ٹارگٹ کے حصول کو ممکن بنا ئیں یہ بات صوبائی وزیر زراعت سید حسین جہانیاں گردیزی نے منسٹرز بلاک لاہور میں محکمہ جنگلات کی کارکردگی کیلئے منعقدہ جائزہ اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے کہی۔ انھوں نے کہا کہ محکمہ جنگلات کو تجرباتی بنیادوں پر گرین ہاؤس نرسریاں بنانی چاہئیں۔پنجاب کے اضلاع میں متعدد یونین کونسلوں میں ایک ماڈل کونسل کے قیام کو محکمہ جنگلات کی پودوں کی مختلف اقسام کی قلموں کی فراہمی سے لنک کرنے کی ضرورت ہے۔سید حسین جہانیاں گردیزی نے کہا کہ نئے پودے لگانے اور ان کی افزائش کے نظام کی  مانیٹرنگ اور ایویلیشن کی جائے۔ انھوں نے محکمہ جنگلات کو اپنے اہم پراجیکٹس کی تیاری و تکمیل کے لیے ایک الگ اکاؤنٹ بنانے کی سمری محکمہ فنانس و پی اینڈ ڈی میں ارسال کرنے کی ہدایت کی۔تاکہ اس ضمن میں کسی قسم کی مالی دشواری کا سامنا نہ کرنا پڑے۔صوبائی وزیر نے مزید کہا کہ محکمہ جنگلات کو پودوں کی مارکیٹنگ کے لیے محکمہ ٹورازم کے ساتھ مل کر کام کرنا چاہیے۔
صوبائی وزیر جنگلات محمد سبطین خان نے کہا کہ محکمہ  کاشتکاروں و زمینداروں کے لیے زمین کی زرخیزی کے حساب سے مختلف اقسام کے پودوں کی قلموں کی فراہمی کو یقینی بنا رہا ہے۔محکمہ جنگلات نے حال ہی میں ناجائز قابضین سے محکمے کی 3000ایکڑ زمین واگزار کروائی ہے۔ انھوں نے کہا کہ محکمہ جنگلات کے ٹاسک اور ذمہ داریوں میں اضافہ کے ساتھ اسکا بجٹ بڑھانا بھی وقت کی اہم ضرورت ہے۔محمد سبطین خان نیکہا کہ محکمہ جنگلات نے پہلی بار تمام لگائے جانے والے پودوں اور درختوں کی تعداد کے ڈیٹا کو دستاویزی شکل دی ہے۔ حکومت ہزاروں ایکڑوں پر محیط فارسٹ ایریز کی نگرانی کے لیے نئے گارڈز اور ملازمین کی بھرتی کی اجازت دے۔قبل ازیں سیکرٹری جنگلات پنجاب کیپٹن(ر)محمد آصف نے کمیٹی کو محکمہ جنگلات کی کارکردگی رپورٹ پیش کی اور میٹنگ کے شرکاء  کو فارسٹ ریسورس،فارسٹ ٹایپز،ایریز، پنجاب فارسٹ پالیسی 2019 میں وسائل کے تحفظ،ماحولیاتی تحفظ و موسمی تبدیلیوں، پلاننگ،مانیٹرنگ،ایویلیشن، فارسٹ ٹری ریسرچ و ٹریننگ،پروٹیکٹڈ ایریا کے قیام اور توسیعی سروسز کے بارے میں بریف کیا۔انھوں نے پنجاب پروٹیکٹڈ ایریا ز ایکٹ 2020 کی منظوری،بجٹ 2020-21،غیر ترقیاتی بجٹ اور ترقیاتی بجٹ کے بارے میں بتایا۔سیکرٹری جنگلات نے محکمہ کے اہم اقدامات میں فارسٹ سیکٹر میں 10بلین ٹری سونامی پروگرام، گل فارسٹ پارک کے قیام اور وائلڈ فروٹ سپزیز کے فروغ وتحفظ،ٹارگٹس اور ان کے حصول میں اب تک ہونے والی کامیابیوں سے متعلق تفصیلی بریفنگ دی۔ شرکاء  نے محکمہ جنگلات کے مستقبل کے منصوبوں کو قابل عمل بنانے کی مختلف تجاویز اور حکمت عملی پر بھی غور کیا۔
میٹنگ میں صوبائی وزیر  جنگلات محمد سبطین خان، سیکرٹری جنگلات پنجاب کیپٹن(ر)محمدآصف،ڈپٹی سیکرٹری پلاننگ(جنگلات)محمد طارق نسیم کے علاوہ چیف منسٹر سپیشل مانیٹرنگ یونٹ کے ہیڈ فصیل آصف نے بھی شرکت کی۔سیکرٹری جنگلات نے میٹنگ میں محکمانہ امور سے متعلق بریفنگ دی۔